Thursday, 30 May 2013

Pin It

Widgets

Rog Aisay Bhi Gham-e-Yaar Se Lag Jatey Hein

Diwaar Se Lag

روگ ایسے بھی غمِ یار سے لگ جاتے ہیں
در سے اُٹھتے ہیں تو دیوار سے لگ جاتے ہیں

عشق آغاز میں ہلکی سی خلش رکھتا ہے
بعد میں سینکڑوں آزار سے لگ جاتے ہیں

پہلے پہلے ہوس اک آدھ دکاں کھولتی ہے
پھر تو بازار کے بازار سے لگ جاتے ہیں

بے بسی بھی کبھی قربت کا سبب بنتی ہے
رو نہ پائیں تو گلے یار سے  لگ جاتے ہیں

کترنیں غم کی جو گلیوں میں اُڑی پھرتی ہیں
گھر میں لے آؤ تو انبار سے لگ جاتے ہیں

داغ دامن کے ہوں، دل کے ہوں کہ چہرے کے فرازؔ
کچھ نشاں عمر کی رفتار سے لگ جاتے ہیں

Rog Aisay Bhi Gham-e-Yaar Se Lag Jate Hein
Dar Se Uthte Hein Tou, Diwaar Se Lag Jate Hein

Ishq Aaghaz Mein Halki Si Khalish Rakhta Hai
Baad Mein Sainkron Aazaar Se Lag Jate Hein

Pehle Pehle Hawas Ik Aadh Dukaan Kholti Hai
Phir Tou Bazaar K Bazaar Se Lag Jate Hein

Be-Basi Bhi Kabhi Qurbat Ka Sabab Banti Hai
Ro Na Paen Tou Galay Yaar Se Lag Jate Hein

Katrane Gham Ki Jo Galyon Mein Urri Phirti Hein
Ghar Mein Lay Aao Tou Anbaar Se Lag Jate Hein

Daag Daman K Hon, Dil K Hon K Chehre K Faraz
Kuch Nishan Umr Ki Raftaar Se Lag Jate Hein....




Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.