Thursday, 9 May 2013

Pin It

Widgets

Shab-e-Hijraan Thi Jo Basar Na Hui.....


Sehar Na Hui

    شبِ ہجراں تھی جو بسَر نہ ہوئی
    ورنہ کِس رات کی سحر نہ ہوئی

    ایسا کیا جرم ہو گیا ہم سے
    کیوں ملاقات عُمر بھر نہ ہوئی

    اشک پلکوں پہ مُستقل چمکے
    کبھی ٹہنی یہ بے ثمر نہ ہوئی

    تیری قُربت کی روشنی کی قسم
    صُبح آئی مگر سحر نہ ہوئی

    ہم نے کیا کیا نہ کر کے دیکھ لیا
    کوئی تدبیر کار گر نہ ہوئی

    کتنے سُورج نِکل کے ڈُوب گئے
    شامِ ہجراں ! تری سحر نہ ہوئی

    اُن سے محفل رہی ہے روز و شب
    دوستی اُن سے عُمر بھر نہ ہوئی

    یہ رہِ روزگار بھی کیا ہے
    ایسے بچھڑے کہ پھر خبر نہ ہوئی

    اِس قدر دُھوپ تھی جُدائی کی
    یاد بھی سایۂ شجر نہ ہوئی

    شبِ ہجراں ہی کٹ سکی نہ عدیم
    ورنہ کِس رات کی سحر نہ ہوئی

  





Shab-E-Hijraan Thi , Jo Basar Na Hui
Warna Kis Raat Ki Sehar Na Hui

Aisa Kia Jurm Ho Gaya Hum Se
Kiun Mulaqat Umar Bhar Na Hui

Ashk Palkon Pe Mustakil Chamkay
Kabhi Tehni Yeh, Be-Samar Na Hui

Teri Qurbat Ki Roshni Ki Qasam
Suhba Aaie Magar Sehar Na Hui

Hum Ne Kia Kia Na Kar K Dekh Liya
Koi Tadbeer Kaargar Na Hui

Kitne Sooraj Nikal K Doob Gaey
Sham-E-Hijraan Teri Sehar Na Hui

Un Se Mehfil Rahi Hai Roz-O-Shab
Dosti Un Se Umr Bhar Na Hui

Yeh Rah-E-Rozgaar Bhi Kia Hai
Aisay Bichre K Phir Khabar Na Hui

Is Qadar Dhoop Thi Judai Ki
Yaad Bhi Saya-E-Shajar Na Hui

Shab-E-Hijraan He Kut Saki Na Adeem
Warna Kis Raat Ki Sehar Na Hui...             



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.