Thursday, 30 May 2013

Pin It

Widgets

Tujhko Bhooley Hein Tou Kuch Dosh Zamane Ka Na Tha

Dosh Zamane Ka

    تجھ کو بُھولے ہیں تو کچھ دوش زمانے کا نہ تھا
    اب کے لگتا ہے کہ یہ دکھ ہی ٹھکانے کا نہ تھا

    یہ جو مقتل سے بچا لائے سروں کو اپنے
    ان میں اک شخص بھی کیا میرے گھرانے کا نہ تھا

    ہر برس تازہ کِیا عہدِ محبت کو عبث
    اب کُھلا ہے کہ یہ تہوار منانے کا نہ تھا

    اب کے بے فصل بھی صحرا گل و گلزار سا ہے
    ورنہ یہ ہجر کا موسم ترے آنے کا نہ تھا

    دوش پر بارِ زمانہ بھی لئے پھرتے ہیں
    مسئلہ صرف ترے ناز اٹھانے کا نہ تھا

    یار! کیا کیا تری باتوں نے رُلایا ہے ہمیں
    یہ تماشا سرِ محفل تو دِکھانے کا نہ تھا

    کوئی کس منہ سے کرے تجھ سے شکایت جاناں
    جس کو تُو بھول گیا یاد ہی آنے کا نہ تھا

    آئے دن اک نئی آفت چلی آتی ہے فرازؔ
    اب پشیماں ہیں کہ یہ شہر بسانے کا نہ تھا

Tujhko Bhoolay Hein Tou Kuch Dosh Zmane Ka Na Tha
Ab K Lagta Hai K Yeh Dukh He Thikane Ka Na Tha

Yeh Jo Maqtal Se Bacha Laey Hein Saron Ko Apne
Un Mein Ik Shakhs Bhi Kia Mere Gharane Ka Na Tha

Har Baras Taza Kia Ehd-e-Mohabbat Ko Abus
Ab Khula Hai K Yeh Tehwaar Manane Ka Na Tha

Ab K Be-Fasl Bhi Sehra, Gul-o-Gulzaar Sa Hai
Warna Yeh Hijr Ka Mosam Tere Aanay Ka Na Tha

Dosh Par Baar-e-Zamana Bhi Liyeh Phirte Hein
Mas’ala Sirf Tere Naaz Uthane Ka Na Tha

Yaar Kia Kia Teri Baton Ne Rulaya Hai Hame
Yeh Tamasha Sar-e-Mehfil Tou Dikhane Ka Na Tha

Koi Kis Mounh Se Kare Tujh Se Shikayat Janaa
Jis Ko Tu Bhool Gaya Yaad He Aany Ka Na Tha

Aaey Din Ik Aafat Chali Aati Hai Faraz
Ab Pashemaan Hein K Yeh Shehar Basane Ka Na Tha,,..




Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.