Friday, 10 May 2013

Pin It

Widgets

Waqif Nahi Tum Apni, Nigahon K Asar Se


Apni Nigahon K Asar

واقف نہیں تم اپنی نگاہوں کے اثر سے
اس راز کو پوچھو کسی برباد نظر سے

اک اشک نکل آیا یے یوں دیدہ تر سے
جس طرح جنازہ کوئی نکلے بھرے گھر سے

رگ رگ میں عوض خون مے دوڑ رہی ہے
وہ دیکھ رہے ہیں مجھے مخمور نظر سے

اس طرح بسر ہوتے ہیں دن رات ہمارے
اک تازہ بلا آئی جو اک ٹل گئی سر سے

صحرا کو بہت ناز ہے ویرانی پہ اپنی
واقف نہیں شاید مرے اجڑے ہوئے گھر سے

مل جائیں ابد سے مرے اللہ یہ لمحے
وہ دیکھ رہے ہیں مجھے مانوس نظر سے

جائیں تو کہاں جائیں کھڑے سوچ رہے ہیں
...اٹھنے کو خمار اٹھ تو گئے ہم کسی در سے

Waqif Nahi Tum Apni Nigahon K Asar Se
Is Raaz Ko Poocho Kisi Barnaad Nazar Se

Ik Ashk Nikal Aaya Yun Deeda-e-Tar Se
Jis Tarha Janaza Koi Nikle Bharay Ghar Se

Rug Rug Mein Aouz, Khoon Mein, Maiy Dorr Rahi Hai
Woh Dekh Rahe Hein Mujhe , Makhmoor Nazar Se

Is Taraha Basar Hote Hein , Din Raat Hamare
Ik Taza Bala Aaie, Jo Ik Tal Gaie Sar Se

Sehra Ko Bohat Naaz Hai Veerani  Pe Apni
Waqif Nahi Shayad , Mere Ujre Huey Ghar Se

Mil Jaen Abad Se Mere Allah , Yeh Lamhe
Woh Dekh Rahe Hein Mujhe, Manoos Nazar Se

Jaen Tou Kahan Jaen, Kharray Soch Rahe Hein
Uthne Ko Khumaar Uth Tou Gaey, Hum Kisi Dar Se...



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It


Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.