Friday, 10 May 2013

Pin It

Widgets

Waqt Ki Umr Kia Barri Hogi,,,,,,,,,,,


Aansoo Urdu Poetry

وقت کی عمر کیا بڑی ہو گی
اک ترے وصل کی گھڑی ہو گی

دستکیں دے رہی ہے پلکوں پر
کوئی برسات کی جھڑی ہو گی

کیا خبر تھی کہ نوکِ خنجر بھی
پھول کی اک پنکھڑی ہو گی

زلف بل کھا رہی ہے ماتھے پر
چاندنی سے صبا لڑی ہو گی

اے عدم کے مسافرو ہشیار
راہ میں زندگی کھڑی ہو گی

کیوں گرہ گیسوؤں میں ڈالی ہے
جاں کسی پھول کی اڑی ہو گی

التجا کا ملال کیا کیجئے
ان کے در پر کہیں پڑی ہو گی

موت کہتے ہیں جس کو اے ساغر
زندگی کی کوئی کڑی ہو گی

Waqt Ki Umr Kia Barri Hogi
Ik Tere Visl Ki Gharri Hogi

Dastakein De Rahi Hai Palkon par
Koi Barsaat Ki Jharri Hogi

Kia Khabar Thi K Nok-e-Khanjar Bhi
Phool Ki Ik Pankharri Hogi

Zulf Bul Kha Rahi Hai Mathay Par
Chandni Se Saba Larri Hogi

Ay Adum K Musafiro Hoshyaar
Raah Mein Zindagi Kharri Hogi

Kiun Girah Gaisoun Mein dali Hai
Jaan Kisi Phool Ki,  Arri Hogi

Iltija Ka Malaal Kia Kijiye
Unk Dar Par Kaheen Parri Hogi

Mout Kehte Hein Jisko Ay Sagar
Zindagi Ki Koi Karri Hogi...............



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It


Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.