Wednesday, 5 June 2013

Pin It

Widgets

Aisa Toota Hai Tamannao Ka Pandaar K Bus,,,

Mohabbat Ka Pandaar

ایسے ٹوٹا ہے تمناؤں کا پندار کہ بس
دل نے جھیلے ہیں محبت میں وہ آزار کہ بس

ایک جھونکے میں ز مانے میرے ہاتھوں سے گئے
اس قدر تیز تهى وقت کی رفتار کہ بس

تو کبھی رکھ کے ہمیں دیکھ تو بازار کے بیچ 
اس طرح ٹوٹ کے آئیں گے خریدار کے بس

کل بھی صدیوں کی مسافت سے پرے تھے دونوں
درمیاں آج بھی پڑتی ہے وہ دیوار کہ بس

یہ جو اک زِد ہے کہ محسن میں شکایت نہ کروں
ورنہ تم سے تو وہ شکوۓ ہیں میرے یار کہ بس

Aisa Toota Hai Tamannao Ka Pandaar K Bus
Dil Ne Jhailay Hein Mohabbat Mein Woh Aazaar K Bus

Aik Jhonkay Mein Zamane Mere Hathon Se Gaey
Is Qadar Taiz Thi Waqt Ki Raftaar K Bus

Tu Hame Rakh K Kabhi Dekh Tou Bazaar K Beech
Is Taraha Toot K Aengay Khareedar K Bus

Kal Bhi Sadyon Ki Musafat Se Paray Thay Dono
Darmiyaan Aj Bhi Parti Hai Woh Dewaar K Bus

Yeh Tou Ik Zid Hai K Mohsin Mein Shikayat Na Karon
Warna Tum Se Tou Woh Shikay Hein Mere Yaar K Bus...


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It


Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.