Saturday, 1 June 2013

Pin It

Widgets

Be-Kaif Hein Yeh Sagar-o-Maina Tere Bagair

Zehar Ka Peena

بےکیف ہیں یہ ساغر و مینا ترے بغیر
آساں ہوا ہے زہر کا پینا ترے بغیر

کیا کیا ترے فراق میں کی ہیں مشقّتیں
اِک ہو گیا ہے خُون پسینہ ترے بغیر

جچتا نہیں ہے کوئی نِگاہوں میں آج کل
بےعکس ہے یہ دیدہء بینا ترے بغیر

کِن کِن بلندیوں کی تمنا تھی عشق میں
طے ہو سکا نہ ایک بھی زِینہ ترے بغیر

تُو آشنائے شدتِ غم ہو تو کچھ کہوں
کِتنا بڑا عذاب ہے جینا ترے بغیر

ساحل پہ کتنے دیدہ و دل فرشِ راہ تھے
اُترا نہ پار دل کا سفینہ ترے بغیر

باقی کسی بھی چیز کا دل پر اثر نہیں
پتھر کا ہو گیا ہے یہ سینہ ترے بغیر




Be-Kaiaf Hein Yeh Sagar-o-Meena Tere Bagair
Aasaan Hua Hai Zehar Ka Peena Tere Bagair

Kia Kia Tere Firaq Mein Ki Hein Mushaqqatein
Ik Ho Gaya Hai Khoon Paseena Tere Bagair

Jachta Nahi Hai Koi Nigahon Mein Aaj Kal
Be-Aks Hai Yeh Deeda-e-Beena Tere Bagair

Kin Kin Bulandiyon Ki Tamanna Thi Ishq Mein
Tay Ho Saka Na Aik Bhi Zeena Tere Bagair

Tu Aashna-e-Shiddat-e-Gham Ho Tou Kuch Kahon
Kitna Barra Azaab Hai , Jeena Tere Bagair

Sahil Pay Kitne Deeda-o-Dil Farsh-e-Raah Thay
Utra Na Paar Dil Ka Safeena Tere Bagair

Baqi Kisi Bhi Cheez Ka Dil par Asar Nahi
Pathar Ka Ho Gaya Hai yeh Seena Tere Bagair... 


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It 

 
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.