Monday, 3 June 2013

Pin It

Widgets

Bohat Shadaab Lekin Be Samar Tha...

Mosam Ka Shajar

بہت  شاداب  لیکن بے ثمر تھا
کسی ناراض موسم کا شجر تھا

وہ صدیوں کا تھکا ہارا مسافر
جسے درپیش لاحاصل سفر تھا

وہ اپنے آپ سے بچھڑا ہوا تھا
تلاشِ گم شدہ میں در بدر تھا

وہ سوچوں میں ستارے ٹانکتا تھا
کہ اس کی راکھ میں کوئی شرر تھا

وہ اَن دیکھے خداکو مانتا تھا
فرشتوں سے زیادہ معتبر تھا

خرد مندوں کے شہرِ بے ہنر میں
وہ زندہ تھا یہی اس کا ہنر تھا

دیا اس کا ُبجھا رہتا تھا عاجزؔ
کسی آسیب کا شاید اثر تھا

Bohat Shadaab Lekin Be Samar Tha
Kisi Naraz Mosam Ka Shajar Tha

Woh Sadyon Ka Thaka Hara Musafir
Jisay Darpaish La Haasil Safar Tha

Woh Apne Aap Se Bichra Hua Tha
Talash-e-Gumshuda Mein Darbadar Tha

Woh Sochon Mein Sitare Taankta Tha
K Uski Raakh Mein Koi Sharar Tha

Woh Un Dekhey Khuda Ko Manta Tha
Farishton Se Ziada Moutabar Tha

Khurd Mandon K Sher-e-Be Hunar Mein
Woh Zinda Tha Yehi Us Ka Hunar Tha

Diya Uska Bhuja Rehta Tha Aajiz
Kisi Aasaib Ka Shayad Asar Tha..


 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It



Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.