Saturday, 29 June 2013

Pin It

Widgets

Faqeer Hein Hum, Haqeer Hein Hum ..

Guroor Kesa Kahan


غرور کیسا، کہاں کی نخوت، بھلا امیری کی خو و بو کیا
فقیر ہیں ہم ، حقیر ہیں ہم ، عروجِ دنیا  کی  گفتگو کیا

کہاں کا شکوہ ، شکایتیں کیا ، غرض کسے ہے  کنایتوں سے
ملے جو ہم سے تو ہے عنایت، ملے نہ ہم سے تو جستجو کیا

برا کہو یا بھلا کہو تم ، برے ہی ہیں  ہم تو  سب  سراپا
بڑائ کیسی، چھٹائ کیسی، جہاں میں عاشق کی آبرو کیا

بنایا جیسا خدا نے تم کو ، بنے ہی بگڑے ہو اے فناؔ تم
تمہاری کج بحثیاں ہیں ظاہر زباں درازی یہ دوبدو کیا


Guroor Kesa , Kahan Ki Nakhwat, Bhala Ameeri Ki Khu-Wa-Boo Kia
Faqeer Hein Hum, Haqeer Hein Hum, Urooj-e-Dunya Ki Guftagu Kia

Kahan Ka Shikwah, Shikayatein Kia, Garz Kisay Hai Kanayaton Say
Milay Jo Hum Say Tou Hai Inayat, Milay Na Hum Say Tou Justujoo Kia

Bura Kaho Ya Bhala Kaho Tum, Buaray He Hein Hum, Tou Sab Sarapa
Barraie Kesi , Chataie Kesi , Jahan Mein Aashiq Ki Aabroo Kia

Banaya Jesa Khuda Ne Tum Ko, Banay He Bigrray Ho Ay Fana Tum
Tumhari Kuj-Behsiyaan Hein Zahir, Zubaan Daari Pe Du-Ba-Du Kia....



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

2 comments:

Thanks For Nice Comments.