Saturday, 1 June 2013

Pin It

Widgets

Hamari Jung Tou Khud Se Thi, Dhaal Kia Rakhte

Faqeer Log Thay

ہماری جنگ تو خود سے تھی،ڈھال کیا رکھتے
فقیر  لوگ  تھے  ، مال و منال  کیا  رکھتے

ہمیں خبر تھی کہ فرصت نہیں‌ زمانے کو
کسی کے سامنے، اپنا سوال کیا رکھتے

گواہ اسکے، کٹہرے اسی کے منصف بھی
ہم اپنی جیت کا دل میں‌ خیال کیا رکھتے

ستم گری تو زمانے کی رسم تھی شاید
ذرا سی بات کا دل میں‌ ملال کیا رکھتے

تیری گلی میں‌دل مضطرب کو چھوڑ آئے
پرائی چیز کا سر پر وبال کیا رکھتے

صدی صدی کا جہاں ،ایک ایک دن ٹہرا
..حساب ناز، وہاں ماہ و سال کیا رکھتے

Hamari  Jung Tou Khud Se Thi Dhaal Kia Rakhte
Faqeer  Log  Thay , Mal-o-Manaal  Kia  Rakhte

Hame Khabar Thi K Fursat Nahi Zamane Ko
Kisi K Samne   Apna  Sawaal  Kia  Rakhte

Gawah Us K , Katehray  Usi  K  Munsif  Bhi
Hum Apni Jeet Ka Dil Mein Khayal Kia Rakhte

Sitam Gari Tou Zamane Ki Rasm Thi Shayad
Zara Si Baat Ka Dil Mein Malaal Kia Rakhte

Teri Gali Mein Dil-e-Muztarib Ko Chorr Aaey
Purani Cheez Ka Sar Par Wabaal Kia Rakhte

Sadi  Sadi Ka Jahan , Aik  Aik  Din Thehra
Hisab-o-Naaz Wahan Mah-o-Saal Kia Rakhte...


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It 

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.