Friday, 14 June 2013

Pin It

Widgets

Khabar Thi Ghar Se Woh Nikla Hai Meenh Barastey Mein..

Meenh Barastey Mein

خبر تھی گھر سے وہ نکلا ہے مینہ برستے میں
تمام  شہر  لئے  چھتریاں  تھا  رست ے میں

بہار  آئی  تو  اک  شخص  یاد  آیا  بہت
کہ جسکے ہونٹوں سے جھڑتےتھےپھول ہنستےمیں

کہاں کے مکتب و ملّا کہاں کے درس و نصاب
بس اک  کتابِ محبت رہی  ہے  بستے  میں

مِلا تھا ایک ہی گاہک تو ہم بھی کیا کرتے
سو خود کو بیچ دیا بے حساب سستے میں

یہ عمر بھر کی مسافت ہے، دل بڑا رکھنا
کہ لوگ ملتے بچھڑتے رہیں گے رستے میں

ہر ایک در خورِ رنگ و نمو نہیں ورنہ
گل و گیاہ سبھی تھے صبا کے رستے میں

ہے زہرِ عشق، خمارِ شراب ہے آگے
نشہ بڑھاتا گیا ہے یہ سانپ ڈستے میں

جو سب سے پہلے ہی رزمِ وفا میں کام آئے
فراز ہم تھے انہیں عاشقوں کے دستے میں


Khabar Thi Ghar Se Woh Nikla Hai Meenh Barstey Mein
Tamaam  Shehar  Liyeh  Chatriyaan Tha  Rastey Mein

Bahaar Aaie Tou , Ik  Shakhs  Bohat Yaad Aaya
K Jis K Honton Se Jhartey Thay Phool  Hanste Mein

Kahan K Maktab-o-Mulla , Kahan K Dars-o-Nisaab
Bus  Ik  Kitab-e-Mohabbat  Rahi  Hai  Bastey  Mein

Mila Tha Aik He Gaahak Tou Hum Bhi Kia Karte
So Khud Ko Baich Diya Hai  Hisaab Sastey Mein

Yeh Umr Bhar Ki Musafat Hai Dil Barra Rakhna
K Log Miltey  Bichrtey  Rahen Gay Rastey Mein

Har Aik Dar Khhor-e-Rang-o-Namu Nahi  Warna
Gul-o-Gayah  Sabhi  Thay  Saba K Rastey  Mein

Hai Zehr-e-Ishq , Khumar-e-Sharab  Hai  Aagay
Nasha Barhata Gaya Hai Yeh Saanp Dastey Mein

Jo Sab Se Pehle He Razm-e-Wafa Mein Kaam Aaey
Faraz Hum Bhi Thay Inhe  Aashiqon Rastey Mein,,,...


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It



Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.