Monday, 17 June 2013

Pin It

Widgets

Khof Ki Shab Mein Zehar Peenay Se........

Marna Behtar hai
   
 خوف کی شب میں ہونٹ سینے سے
    مرنا بہتر ہے ایسےجینے سے

    کچھ تو قائم رہے انا کا بھرم
    دیکھنا ہے اسے قرینے سے

    یوں تماشا تو اس کو ہونا تھا
    جو گری آرزو کے زینے سے

    کچھ ہواؤں کا اعتبار نہیں
    ورنہ کیا خوف اس سفینے سے

    دل کا اب تلخیوں سے ناتہ ہے
    لطف لیتا ہے زہر پینے سے ۔۔

  
Khauf Ki Shab Mein Hont Seenay Se
Marna Behtar Hai Aisay Jeenay Se

Kuch Tou Qaayim Rahay Anaa Ka Bharam
Dekhna Hai Usay Qareenay Se

Yun Tamasha Tou Usko Hona Tha
Jo Giri Aarzoo Ke Zeenay Se

Kuch Hawaaon Ka Aitbaar Nahi
Warna Kia Khauf Us Safeenay Se

Dil Ka Ab Talkhion Se Naata Hai
Lutf Laita Hai Zeher Peenay Se....


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It



Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.