Thursday, 27 June 2013

Pin It

Widgets

Manzar Yeh Dil-Nasheen Tou Nahi Dil Kharash Hai..


Gehray Samandaron Mein

    منظر یہ دِل نشیں تو نہیں دِل خراش ہے
    دوشِ ہَوا  پہ  ابرِ برہنہ کی لاش  ہے

    لہروں کی خامشی پہ نہ جا اے مزاجِ دِل
    گہرے سمندروں میں بڑا  ارتعاش  ہے

    سوچوں تو جوڑ لوں کئی ٹوٹے ہوئے مزاج
    دیکھوں تو اپنا شیشۂ دل  پاش  پاش  ہے

    دل وہ غریبِ شہرِ وفا ہے کہ اب جسے
    تیرے قریب رہ کے بھی تیری تلاش ہے

    آنسو مرے تو خیر وضاحت طلب نہ تھے
    تیری ہنسی کا راز بھی دُنیا پہ فاش ہے

    میرا شعور جس کی جَراحت سے ُچور تھا
    تیرے بدن پہ بھی اُسی غم کی خراش ہے

    محسن تکلفّات کی غارت گری نہ پوچھ
   .. مجھکوغمِ وفا ، تجھے فکر معاش ہے


Manzar Yeh Dil Nasheen Tou Nahi Dil Kharash Hai
Dosh-e-Hawa Pay Abr-e-Barhana Ki Laash Hai

Lehron Ki Khamshi Pay Na Ja Ay Mujaz-e-Dil
Gehray Samandaron Mein Barra  Arta’ash Hai

Sochon Tou Jorr Loon Kai Tootay Huey Mijaaz
Dekhon Tou Apna Sheesha-e-Dil Paash Paash Hai

Dil Woh Gareeb-e-Shehr-e-Wafa Hai K Ab Jisay
Tere Qareeb Reh K Bhi Teri Talaash Hai

Aansoo Mere Tou Khair Wazahat Talab Na Thay
Teri Hansi Ka Raaz Bhi, Dunya Pay Faash Hai

Mera Shaoor Jiski Jarahat Say Choor Tha
Tere Badan Pay Bhi Usi Gham Ki Kharash Hai

Mohsin Takallufaat Ki Gaarat Gari Na Pooch
Mujhko Gham-e-Wafa, Tujhe Firkr-e-Muaash Hai..


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It



Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.