Sunday, 23 June 2013

Pin It

Widgets

Milen Hum Kabhi Tou Aisay K Hijaab Bhool Jaey..

Romantic Urdu Poetry

ملیں ہم کبھی تو ایسے کہ حجاب بھول جائے
میں سوال بھول جاؤں، تُو جواب بھول جائے

کبھی تُو جو پڑھنے بیٹھے، مجھے حرف حرف دیکھے
تیری آنکھیں بھیگ  جائیں ، تُو کتاب بھول  جائے

تیری سوچ پر ہو حاوی میری یاد اس طرح سے
کہ تُو اپنی  زندگی کا یہ  نصاب  بھول  جائے

تُو کسی خیال  میں ہو اور اُسی خیال میں ہی
کبھی میرے راستے میں تُو گلاب بھول جائے

تُو جو دیکھے میری جانب تو بچُوں میں اک گناہ سے
تجھے دیکھ  لوں میں  اتنا  کہ شراب  بھول  جائے

مجھے  غم ت و دے رہا ہے، اور اُس پہ چاہتا ہے
...میں  حساب  رکھ نہ  پاؤں ، وہ حساب بھول جائے

 Milen Hum Kabhi Tou Aisay K Hijaab Bhool Jaen
Mein Sawaal Bhool Jaon ,Tu Jawaab Bhool Jaey

Kabhi Tu Jo Parhne Bethey Mujhe Harf Harf Dekhe
Teri Aankhein Bheeg Jaen ,Tu Kitaab Bhool Jaey

Teri Soch Par Ho Haavi Meri Yaad Is Tarha Say
K Tu Apni Zindagi Ka Yeh Nisaab Bhool Jaey

Tu Kisi Khayal Mein Ho, Aur Usai Khayal Mein He
Kabhi Mere Raastey Mein Tu Gulaab Bhool Jaey

Tu Jo Dekhe Meri Janib Tu Bachoon Mein Ik Gunah Se
Tujhe Dekh Loon Mein Itna K Sharaab Bhool Jaey

Mujhe Gham Tou Day Raha Hai Or Us Pay Chahta Hai
Mein Hisaab Rakh Na Paon Whoh Hisaab Bhool Jaey….



 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.