Sunday, 30 June 2013

Pin It

Widgets

Na Sira Mila Hai Koi , Na Suraag Zindagi Ka.....

Daagh Zindagi Ka

نہ سرا ملا ہے کوئی ، نہ سراغ  زندگی  کا
یہ ہے میری کوئی ہستی، کہ ہے داغ زندگی کا

یہی وصل کی حقیقت، یہی ہجر کی حقیقت
کوئی موت کی ہے پروا، نہ دماغ زندگی کا

یہ بھی خوب ہے تماشا، یہ بہار یہ خزاں کا
یہی  موت  کا  ٹھکانہ ،  یہی باغ زندگی  کا

یہ میں اُسکو پی رہا ہوں، کہ وہ مجھکو پی رہا ہے
مرا  ہم نفَس  ازَل  سے ،  ہے ایاغ  زندگی  کا

اسد اُس سے پھر تو کہنا، یہی بات اک پرانی
....میں  مسافرِ  شبِ ہجر ،  تُو چراغ زندگی کا

Na Sira Mila Hai Koi , Na Suraag Zindagi Ka
Yeh Hai Meri Koi Hasti, K Hai Daag Zindagi Ka

Yehi Visl Ki Haqiqat , Yehi Hijr Ki Haqiqat
Koi Mout Ki Hai Parwah, Na Dimaag Zindagi Ka

Yeh Bhi Khoob Hai Tamasha, Yeh Bahaar Yeh Khizan Ka
Yehi Mout Ka Thikana , Yehi Baag Zindagi Ka

Ye Mein Usko P Raha Hoon. K Woh Mujhko P Raha Hai
Mera Hum-Nafas Azal Say , Hai Ayaag Zindagi Ka

Asad  Us Se Phir Tou Kehna , Yehi Baat Ik Purani
Mein Musafir-e- Shab-e-Hijr, Tu Charaag Zindagi Ka….


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

2 comments:

Thanks For Nice Comments.