Saturday, 1 June 2013

Pin It

Widgets

Rukhsar Aisay Timtimaty Hein Janab K

Gajre Gulaab K

رخسار ایسے ٹمٹماتے  ہیں  جناب  کے
پہنے ہوں جیسے چاند نے گجرے گلاب کے

 لکھا ہے تیرا نام بھی چاہت کے خون سے
آؤ ورق دکھائوں میں دل کی کتاب کے

اتنا پلا دے آج ک جی بھر کے روئیں ہم
 نکلیں ہماری آنکھ سے آنسو شراب کے

اترا وہ اس طرح سے سمندر کی گود میں
جتنے بھنور تھے سو گئے پہلو میں آب کے

دیدار یار بولئے کیسے ہو آج کل
پہرےیں چاند چہرے پے کالے نقاب کے

مل کر تمام رات وہ پھر بھی نہیں ملا
سورج بتا گیا ہے  یہ دھوکے تھے خواب کے۔۔


Rukhsar Aisay Timtimaty Hein Janab K
Pehnay Hon Jaisy Chaand Ne Gajrey Gulaab K

Likha Hai Tera Naam Bhi Chahat K Khoon Say
Aao Warq Dikhaon Main Dil Ki Kitaab K

Itni Pila Day Aaj K Ji Bhar K Royen Hum
Niklen Hamari Aankh Say Aanso Sharaab K

Utra Wo Is Tarha Se Samandar Ki Goad Mein
Jitney Bhanwar Thay So Gaye Pehlu Mein Aab K

Didaar-e-Yaar Bolye Kaisey Ho Aaj Kal
Pehray Hein Chaand Chehray Pay Kalay Naqaab K

Mil Kar Tamaam Raat Woh, Phir Bhi Nahi Mila
Suraj Bata Gaya Hai, Ye Dhokay Thay Khawab K....





Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It 

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.