Sunday, 2 June 2013

Pin It

Widgets

Sarkon Pay Ghoomne Nikalte Hein Shaam Ko...

Niklen hein Shaam Ko
سڑکوں پہ گھومنے کو نکلتے ہیں شام سے
آسیب اپنے کام سے، ہم اپنے کام سے

نشّے میں ڈگمگا کے نہ چل، سیٹیاں بجا
شاید کوئی چراغ اُتر آئے بام سے

غصّے میں دوڑتے ہیں ٹرک بھی لدے ہوئے
میں بھی بھرا ہُوا ہوں بہت انتقام سے

دشمن ہے ایک شخص بہت، ایک شخص کا
ہاں عشق ایک نام کو ہے ایک نام سے

میرے تمام عکس مرے کرّ و فر کے ساتھ
میں نے بھی سب کو دفن کیا دھوم دھام سے

مجھ بے عمل سے ربط بڑھانے کو آئے ہو
یہ بات ہے اگر، تو گئے تم بھی کام سے

ڈر تو یہ ہے ہوئی جو کبھی دن کی روشنی
اُس روشنی میں تم بھی لگو گے عوام سے

جس دن سے اپنی بات رکھی شاعری کے بیچ
میں کٹ کے رہ گیا شعرائے کرام سے

Sarkon Pay Ghoomne Ko Nikalte Hein Shaam Ko
Aasaib Apne Kaam Se , Hum Apne Kaam Se

Nashay Mein Dagmaga K Na Chal, Seetiyan Baja
Shayad Koi Charaag Utar Aaey Baam Se

Gussay Mein Dorrte Hein , Tarak Bhi Laday Huey
Mein Bhi Bhara Hua Hoon, Bohat Intaqaam Se

Dushman Hai Aik Shakhs Bohat Aik Shakhs Ka
Han Ishq Aik Naam Ko Hai, Aik Naam Se

Mere Tamaam Aks Mere Karro-Far K Sath
Mein Ne bhi Sab Ko dafn Kia Dhoom Dhaam Se

Mujh Be-Amal Se rabt, Barhane Ko Aaey Ho
Yeh Baat Hai Agar , Tou Gaey Tum Bhi Kaam Se

Dar Tou Yeh Hai, Hui Jo Kabhi Din Ki Roshni
Us Roshni Mein Tum Bhi Lago Hay Awaam Se

Jis Din Se Apni Baat Rakhi, Shayari K Beech
Mein Kut K Reh Gaya, Shuraey Karaam Se...




Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.