Thursday, 4 July 2013

Pin It

Widgets

Ab Tou Yeh Khuwahish Hai K Yeh Zakhm Bhi Kha Kar Dekhein..

Yeh Zakhm Bhi

اب تو خواہش ہے کہ یہ زخم بھی کھا کر دیکھیں
لمحہ بھر کو ہی سہی اُس کو بُھلا کر دیکھیں

شہر میں جشنِ شبِ قدر کی ساعت آئی
آج ہم بھی تیرے ملنے کی دعا کر دیکھیں

آندھیوں سے جو الجھنے کی کسک رکھتے ہیں
اِک دِیا تیز ہَوا میں بھی جلا کر دیکھیں

کچھ تو آوارہ ہواؤں کی تھکن ختم کریں
اپنے قدموں کے نشاں آپ مِٹا کر دیکھیں

زندگی اب تجھے سوچیں بھی تو دم گھٹتا ہے
ہم نے چاہا تھا کبھی تجھ سے وفا کر دیکھیں

جن کے ذرّوں میں خزاں ہانپ کے سو جاتی ہے
ایسی قبروں پہ کوئی پھول سجا کر دیکھیں

دیکھنا ہو تو محبت کے عزاداروں کو
ناشناسائی کی دیوار گِرا کر دیکھیں

یوں بھی دنیا ہمیں مقروض کئے رکھتی ہے
دستِ قاتل تیرا احساں بھی اٹھا کر دیکھیں

رونے والوں کے تو ہمدرد بہت ہیں محسن
..ہنستے ہنستے کبھی دنیا کو رُلا کر دیکھیں


Ab Tou Yeh Khuwahish Hai Yeh Zakhm Bhi Kha Kar Dekhein
Lamha Bhar Ko He Sahi Us Ko Bhula Kar Dekhein

Shehar Mein Jashn-e-Shab-e-Qadar Ki  Sa’at Aaiee
Aj Hum B Tere Milne Ki Duaa Kar Dekhein

Ulajhne Ki Kasak Rakhte Hein Aandhiyon Se Jo
Ik Diya Taiz hawa Mein Bhi Jala Kar Dekhein

Kuch Tou Awara Hawaoun Ki Thakan Khatam Karen
Apne Qadmon K Nishaan Aap Mita Kar Dekhein

Zindagi Ab Tujhe Sochein Bhi Tou Dum Ghut’ta  Hai
Hum Ne Chaha Tha Kabhi Tujhse Wafa Kar Dekhein

Hai Jin K Zarron Mein Khizaan Haanp K So Jati
Aisi Qabron Pe Koi Phool Saja Kar Dekhein

Dekhna Ho Tou Mohabbat K Azadaaron Ko
Na Shanasaiee Ki Diwaar Gira Kar Dekhein

Yun Bhi Dunya Hame Maqrooz Kiye Rakhti Hai
Dast-e-Qatil Tera Ehsaan Bhi Utha Kar Dekhein

Ronay Walon K Tou Hamdard Bohat Hein Mohsin
Hansty Hansty Kabhi Dunya Ko Rula Kar Dekhein..



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.