Monday, 22 July 2013

Pin It

Widgets

دامن گل میں ہی گلزار بکھر جاتے ہیں .. ..

Gulzaar Bikhar Jaate

دامن گل میں ہی گلزار بکھر جاتےہیں
آگ بجھتی ہے تو انگار بکھر جاتےہیں

شمع جلتی ہے ایگ ہی لمحے میں لیکن
جل کے پروانے کئ بار بکھر جاتےہیں

جن کو انسان پروتا ہے بہت الفت سے
ہائے وہ گل سر بازار بکھر جاتےہیں

پاؤں اٹھتے ہیں ترے کوچے کی جانب جب بھی
اپنی راہوں میں کئ خار بکھر جاتےہیں

رات کے پچھلے پہر خون تمنا کی طرح
ہم تری یاد میں اے یار بکھر جاتےہیں

ہوگا انداز وفا ان کا الگ ہی محسن
  ..  ..  جن کی راہوں میں طلبگار بکھر جاتےہیں


Daman-e-Gull Mein Hi Gulzaar Bikhar Jaate Hein
Aag Bujhti Hai To Angaar Bikhar Jaate Hein

Shama Jalti Hai Sada Ek Hi Lamhe Mein Lekin
Jal K Parvaane Kaie Baar Bikhar Jaate Hein

Jin Ko Insaan Pirota Hai Bohat Ulfat Se
Haaye Wo Gull Sar-E-Bazaar Bikhar Jaate Hein

Paaon Uthate Hein Tere Koche Ki Jaanib Jab Bhi
Apni Raahon Mein Kayi Khaar Bikhar Jaate Hein

Raat K Pichle Pehar Khoon-e-Tamanna Ki Tarha
Hum Teri Yaad Mein Ay Yaar Bikhar Jaate Hein

Ho Ga Andaaz-e-Wafa Un Ka Alag Hi Mohsin
Jin Ki Rahoon Mein Talabgaar Bikhar Jaate Hein..  ..



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.