Sunday, 14 July 2013

Pin It

Widgets

Faaslay Itne Barhay Hijr Mein Aazaar K Sath...

Diwaar K Sath

فاصلے اتنے بڑھے ہِجر میں آزار کے ساتھ
 اب تو وہ بات بھی کرتے نہیں غمخوار کے ساتھ

 اب تو ہم گھر سے نِکلتے ہیں تو رکھ دیتے ہیں
 طاق پہ عزتِ سادات بھی دستار کے ساتھ

 اِک تو تم خواب لیے پِھرتے ہو گلیوں گلیوں
 اس پہ تکرار بھی کرتے ہو خریدار کے ساتھ

 ہم کو اس شہر میں جینے کا سودا ہے جہاں
 لوگ معمار کو چُن دیتے ہیں دیوار کے ساتھ

 خوف اِتنا ہے تیرے شہر کی گلیوں میں فرازؔ
 ... چاپ سُنتے ہیں تو لگ جاتے ہیں دیوار کے ساتھ

Faaslay Itney Barhey Hijr Mein  Aazaar K Sath
Ab Tou Woh Baat Bhi Karte Nahi  Gham-Khuwar K Sath

Ab Tou Hum Ghar Se Nikalte Hein Tou Rakh Dete Hein
Taaq Pay Izzat-e-Sadaat Bhi Dastaar K Sath

Ik Tou Tum Khuwaab Liyeh Phirte Ho Galyon Galyon
Us Pay Takraar Bhi Kartey Ho Kharidaar K Sath

Hum Ko Us Shehar Mein Jeenay Ka Soda Hai Jahan
Log Mai’maar Ko Chun Dete Hein Diwaar K Sath

Khof Itna Hai Tere Shehar Ki Galyon Mein Faraz
Chaap Sunte Hein Tou Lag Jate Hein Diwaar K Sath ....



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.