Saturday, 20 July 2013

Pin It

Widgets

Ik Saanwali Ko Ishq Hua Hai Faqeer Se .. ..

         
Ishq Hua Hai
    اک سانولی کو عشق ہوا ہے فقیر سے
    شیلے کی نظم ملنے لگی روحِ میر سے

    روزِ ازل سے دائمی رشتہ ہے جانِ جاں
    ہر غم پذیر روح کا ہر لو پذیر سے

    میں کیسے عشق چھوڑ کے دنیا سمیٹ لوں
    میں کیسے انحراف کروں اپنے پیر سے

    مردہ سماعتوں سے نہ کر ذکرِ حال و قال
    اظہارِ حال کر کسی زندہ ضمیر سے

    مجھ عاشقِ الست کے پرزے ہی کیوں نہ ہوں
    آئے گی یار کی ہی صدا لیر لیر سے

    اپنے پیا کے رنگ سے رنگین ہے علیؔ
   .. .. خسرو نے مسکرا کے کہا ہے کبیر سے

Ik Sanwali Ko Ishq Hua Hai Faqeer Se
Shailay Ki Nazam Milne Lagi Rooh-e-Meer Se

Roz-e-Azal Se Daaeimi Rishta Hai Jan-e-Jaan
Har Gham Pazeer Looh Ka Har Dil Pazeer Se

Mein Kese Ishq Chor K Dunya Samait Loon
Mein Kese Inheraaf Karon Apne Peer Se

Murda Sama’aton Se Na Kar Zikr-e-Hal-o-Qaal
Izhar-e-Haal Kar Kisi Zinda Zameer Se

Mujh Ashiq-e-Alust K Puzay He Kiun Na Hon
Aaey Gi Yaar Ki He Sada Leer Leer Se

Apne Piya K Rung Se Rungeen Hai Ali
Khusro Ne Muskura Kar Kaha Hai Kabeer Se .. ..


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.