Tuesday, 2 July 2013

Pin It

Widgets

Shahon Ki Tarha Thay Na Ameeron Ki Tarha Thay..

Faqeeron Ki tarha

  
شاہوں کی طرح تھے نہ امیروں کی طرح تھے
ہم شہر محبت کے فقیروں کی طرح تھے

دریاؤں میں ہوتے تھے جزیروں کی طرح ہم
صحراؤں میں پانی کے ذخیروں کی طرح تھے

افسوس کے سمجھا نہ ہمیں اہل نظر نے
ہم وقت کی زمبیل میں ہیروں کی طرح تھے

غم طوق گلو، پاؤں میں زنجیر آنا کی
آزاد بھی تھے ہم تو اسیروں کی طرح تھے

اب رہ گۓ ہم صرف روایت کی صورت
جب تھے تو ہمہ رنگ نظیروں کی طرح تھے

حیرت ہے کہ وہ لوگ بھی اب چھوڑ چلے ہیں
جو شفقت کی ہتھلی پے لکیروں کی طرح تھے

سوچی نہ بری سوچ کبھی ان کے لئے بھی
پیوستہ میرے دل میں جو تیروں کی طرح تھے.....   

Shahon Ki Tarha Thay Na Ameeron Ki Tarha Thay
Hum Shehr-E-Mohabbat K Faqeeron Ki Tarha Thay

Daryaoun Mein Hotay Thay Jazeeron Ki Tarha Hum
Sehraoun Mein Pani K Zakheeron Ki Tarha Thay

Afos K Samjha Na Hame Ehl-E-Nazar Ne
Hum Waqt Ki Zanbeel Mein Heeron Ki Tarha Thay

Gham Toq Gulo, Paon Mein Zajeer Ana Ki
Azaad Bhi Thay Hum Tou Aseeron Ki Tarha Thay

Ab Reh Gaey Hum Sirf Riwayat Ki Soorat
Jab Thay Tou Hama Rung Nazeeron Ki Tarha Thay

Hairat Hai K Woh Log Bhi Ab Chorr Chalay Hein
Jo Shafqat Ki Hatheli Pay Lakeeron Ki Tarha Thay

Sochi Na Buri Soch Kabhi Un K Liyeh Bhi
Paiwasta Mere Dil Mein Jo Teeron Ki Tarha Thay  ....


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.