Tuesday, 9 July 2013

Pin It

Widgets

Tum Aur Faraib Khao Bayan-e-Raqeeb Se

Faraib Poetry

تم اور فریب کھاؤ بیانِ رقیب سے
تم سے تو کم گِلا ہے زیادہ نصیب سے

گویا تمہاری یاد ہی میرا علاج ہے
ہوتا ہے پہروں ذکر تمہارا طبیب سے

بربادِ دل کا آخری سرمایہ تھی امید
وہ بھی تو تم نے چھین لیامجھ غریب سے

دھندلا چلی نگاہ دمِ واپسی ہے اب
 ....... آ پاس آ کہ دیکھ لوں تجھ کو قریب سے

Tum Or Faraib Khao Bayan-e-Raqeeb Se
Tum Se Tou Kam Gila Hai Ziada Naseeb Se

Goya Tumhari Yaad He Mera Elaaj Hai
Hota Hai Pehron Zikr Tumhara Tabeeb Se

Barbaad Dil Ka Aakhri Sarmaya Thi Umeed
Woh Bhi Tou Tumne Cheen Liya Mujh Gareeb Se

Dhundla Chali Nigah Dam-e-Wapsi Hai Ab
Aa Pas Aa K Dekh Loon Tujhko Qareeb Se ......


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.