Thursday, 1 August 2013

Pin It

Widgets

Abr-e-Baaran K Iraday Bhi Pur Israar Say Hein .. ..

Aaj Barsay Gi Ghata

ابر ِباراں کے ارادے بھی پُر اسرار سے ہیں
آج برسے گی گھٹا کھل کے یہ آثار سے ہیں

لوگ آتے ہیں ٹھہرتے ہیں چلے جاتے ہیں
اپنے حالات بھی اجڑے ہوئے بازار سے ہیں

وہ اگر چاہے تو دے شرفِ ملاقات مجھے
سب امیدیں میری وابستہ میرے یار سے ہیں

یہ ضروری تو نہیں جیت مسرّت بخشے
ایسی خوشیاں بھی ہیں، ملتی جو فقط ہار سے ہیں

سر بکف ہو کے تیرے کوچے کو چل نکلا ہوں
 عزم تو پکّے ہیں مگر راستے دشوار سے ہیں




Abr-e-Baaraan K Iraaday Bhi Pur Israar Say Hain
Aaj Barsay Gi Ghata Khul K Yeh Aasaar Say Hain

Log Aatay Hain Thehertay Hain Chalay Jaatay Hain
Apnay Haalaat Bhi Ujrre Huway Baazaar Say Hain

Woh Agar Chahay Tou Day Sharf-e- Mulaaqat Mujhy
Sab Umeedain Meri Wabasta Mere Yaar Say Hain

Yeh Zaroori Tou Nahi Jeet Musarrat Bakhshay
Aesi Khushiyan Bhi Hain Milti Jo Sirf Haar Say Hain..

Sar Ba-Kaf Ho K Tere Koochay Say Chal Nikla Hoon
Azam Tou Pakkay Hein Magar Raastay Duhwaar Say Hein… 


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It


Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.