Sunday, 8 September 2013

Pin It

Widgets

Kaheen Ummeed Si Hai Dil Nehaan Khaney Mein ,, ,,

Usay Samjhaney Mein

کہیں امید سی ہے دل کے نہاں خانے میں
ابھی کچھ وقت لگے گا اسے سمجھانے میں​

موسمِ گل ہو کہ پت چھڑ ہو بلا سے اپنی
ہم کہ شامل ہیں نہ کھلنے میں نہ مرجھانے میں​

ہم سے مخفی نہیں کچھ راہگزرِ شوق کا حال
ہم نے اک عمر گزاری ہے ہوا خانے میں​

ہے یوں ہی گھومتے رہنے کا مزا ہی کچھ اور
ایسی لذّت نہ پہنچنے میں نہ رہ جانے میں​

نئے دیوانوں کو دیکھیں تو خوشی ہوتی ہے
ہم بھی ایسے ہی تھے جب آئے تھے ویرانے میں​

موسم کا کوئی محرم ہو تو اس سے پوچھو
.. .. کتنے پت جھڑ ابھی باقی ہیں بہار آنے میں​

Kaheen Ummeed Si Hai Dil K Nehaa’n Khaney Mein
Abhi Kuch Waqt Lagey Ga Usay Samjhaney Mein

Mausam-e-Gul Ho K Patjharr Ho Bala Say Apni
Hum K Shamil Hein Na Khilane Mein Na Murjhane Mein

Hum Se Makhfi Nahi Kuch Rahguzar-e-Shouq Ka Haal
Hum Ne Ik Umr Guzri Hai Hava-Khaney Mein

Hai Yun He Ghumatey Rehney Ka Maza He Kuch Aur
Aisi Lazzat Na Pohanchney Mein Na Reh Janey Mein

Naye Diwanon Ko Dekhein Tou Khushi Hoti Hai
Hum Bhi Aisey He Thay Jab Aaye Thay Viraney Mein

Mosam Ka Koi Meharam Ho Tou Us Say Pucho
Kitney Patjharr Abhi Baqi Hain Bahaar Aaney Mein .. ..


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It  

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.