Wednesday, 25 September 2013

Pin It

Widgets

Mein Apne Aap Mein Tujhko Samo Loon. .. ..

Parveen Shakir Poetry

نہ قرضِ ناخنِ گُل ، نام کو لُوں
ہَوا ہوں ، اپنی گرہیں آپ کھولوں

تری خوشبو بچھڑ جانے سے پہلے
میں اپنے آپ میں تجھ کو سمو لوں

کھُلی آنکھوں سے سپنے قرض لے کر
تری تنہائیوں میں رنگ گھولوں

ملے گی آنسوؤں سے تن کو ٹھنڈک
بڑی لُو ہے ، ذرا آنچل بھگو لوں

وہ اب میری ضرورت بن گیا ہے
کہاں ممکن رہا ، اُس سے نہ بولوں

میں چڑیا کی طرح ، دن بھر تھکی ہوں
ہُوئی ہے شام تو کُچھ دیر سو لوں

چلوں مقتل سے اپنے شام ، لیکن
میں پہلے اپنے پیاروں کو تو رولوں

مرا نوحہ کناں کوئی نہیں ہے
 .. ..سو اپنے سوگ میں خُود بال کھولوں


Na Qarz-e-Nakhun-e-Gul , Naam Ko Loon
Hawa Hoon , Apni Girhein Aap Kholon

Teri Khushboo Bichar Janay Se Pehlay
Mein Apne Aap Mein Tujh Ko Samo Loon

Khuli Aankhon Se Sapnay Qarz Lay Kar
Teri Tanhaeiyon MEin Rung Gho Loon

Milay Gi Aansou'n Se Tan Ko Thandak
Badi Loo Hai, Zara Aanchal Bhigo Loon

Woh Ab Meri Zaroorat Ban Gaya Hai
Kahan Mumkin Raha, Us Say Na Boloon

Mein Chirrya Ki Tarha Din Bhar Thaki Hoon
Hui Hai Shaam Tou Kuch Dair So Loon

Chaloon Maqtal Se Apnay Shaam , Lekin
Mein Pehlay Apne Piyaron Ko Tou Ro Loon

Mera Noha Kanaa'n Koi Nahi Hai
So Apne Sog Mein Khud Baal Kholoon .. ..





Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It


Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.