Thursday, 5 September 2013

Pin It

Widgets

Umer Guzrey Gi Imtehaan Mein Kia .. ..??

Daag He Dein Gay



عمر  گزرے  گی امتحان  میں  کیا
داغ ہی دیں گے مجھ کو دان میں کیا

مری  ہر  بات  بے اثر  ہی  رہی
نَقص ہے کچھ مرے بیان میں کیا

بولتے کیوں نہیں ہو حق میں میرے
آبلے  پڑ گئے   زبان  میں  کیا

اپنی محرومیاں  چھپاتے  ہیں
ہم غریبوں کی آن بان میں کیا

مجھ کو تو کوئی ٹوکتا بھی نہیں
یہی  ہوتا  ہے  خاندان  میں کیا

خود کو دنیا سے مختلف جانا
آگیا  تھا  مرے گمان میں کیا

ہے  نسیمِ بہار  گرد  آلود
خاک اڑتی ہے اس مکان میں کیا

یوں جو تکتا ہے آسمان کو تُو
کوئی رہتا ہے آسمان میں کیا

یہ  مجھے  چین  کیوں نہیں  پڑتا
 .. .. ایک ہی شخص تھا جہان میں کیا

Umer Guzrey Gi Imtehaan Mein Kia
Daag He Dein Gay Mujhko Daan Mein Kia

Meri Har Baat Bay-Asar He Rahi
Nuqs Hai Kuch Mere Bayaan Mein Kia

Boltey Q Nahi Ho Haq Mein Mere
Aablay Parr Gaey Zubaan Mein Kia

Apni Mehroomiyaan Chupatey Hein
Hum Gareebon Ki Aan Baan Mein Kia

Mujh Ko Tou Koi Tokta Bhi Nahi
Yehi Hota Hai Khaandaan Mein Kia

Khud Ko Dunya Se Mukhtalif Jana
Aagaya Tha Mere Gumaan Mein Kia

Hai Naseem-e-Bahaar Gard Aalood
Khaak Urrti Hai Is Makaan Mein Kia

Yun Jo Takta Hai Aasmaan Ko Tu
Koi Rehta Hai Aasmaan Mein Kia

Yeh Mujhe Chain Q Nahi Parrta
Aik Shakhs Tha Jahaan Mein Kia .. ..



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It



Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.