Saturday, 28 September 2013

Pin It

Widgets

Woh Jab Se Shehr-e-Kharabaat Ko Rawana Hua .. ..

Rawana Hua

وہ جب سے شہر خرابات کو روانہ ہُوا
براہِ راست مُلاقات کو زمانہ ہُوا

وہ شہر چھوڑ کے جانا تو کب سے چاہتا تھا
یہ نوکری کا بُلاوا تو اِک بہانہ ہوا

خُدا کرے تری آنکھیں ہمیشہ ہنستی رہیں
یہ آنکھیں جن کو کبھی دُکھ کا حوصلہ نہ ہُوا

کنارِ صحن چمن سبز بیل کے نیچے
وہ روز صبح کا مِلنا تو اَب فسانہ ہُوا

میں سوچتی ہوں کہ مُجھ میں کمی تھی کِس شے کی
کہ سب کا ہوکے رہا وہ، بس اِک مرا نہ ہُوا

کِسے بُلاتی ہیں آنگن کی چمپئی شامیں
کہ وہ اَب اپنے نئے گھر میں بھی پرانا ہُوا

دھنک کے رنگ میں ساری تو رنگ لی میں نے
اور اب یہ دُکھ ، کہ پہن کر کِسے دِکھانا ہُوا

میں اپنے کانوں میں بیلے کے پھُول کیوں پہنوں
 .. .. زبانِ رنگ سے کِس کو مُجھے بُلانا ہُوا

Woh Jab Se Sheher-e-Karabaat Ko Rawaana Hua
Barahe’raast Mulaqaat Ko Zamana Hua

Woh Shehar Chorr K Jaana Tou Kab Se Chahta Tha
Yeh Naukri Ka Bulawaa Tou Ik Bahaana Hua

Khuda Karey Teri Aankhain Hamesha Hansti Rahein
Yeh Aankhain Jin Ko Kabhi Dukh Ka Hosla Na Hua

Kinaar-e-Sehan Chaman Sabz Bail K Neechay
Woh Roz Subah Ka Milna Tou Ab Fasaana Hua

Main Sochti Hoon K Mujh Mein Kami Thi Kis Shay Ki
K Sab Ka Ho K Raha Woh, Bas Ik Mera Na Hua

Kisay Bulati Hain Aangan Ki Champayi Shaamein
K Woh Ab Apne Naye Ghar Mein Bhi Purana Hua

Dhanak K Rang Main Saari Tou Rang Li Hain Mene
Aur Ab Yeh Dukh, K Pehan Kar Kise Dikhana Hua

Main Apne Kaano’n Main Bailay K Phool Q Pehnoon
Zabaan-e-Rung Se Kis Ko Mujhe Bulana Hua .. ..


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.