Wednesday, 30 October 2013

Pin It

Widgets

Be-Rooh Larkiyo'n Ka Thikana Bana Hua ... ....

Kamra Hai Mera

بے روح لڑکیوں کا ٹھکانہ بنا ہوا
کمرہ ہے میرا آئینہ خانہ بنا ہوا

میں نے تو کوئی بات کسی سے نہیں کہی
سوچا ہے جو وہی ہے فسانہ بنا ہوا

ندیا میں کس نےرکھ دیئےجلتےہوئےچراغ
موسم ہے چشمِ تر کا سہانا بنا ہوا

عورت کا ذہن مرد کی اس کائنات میں
اب تک ہے الجھنوں کا نشانہ بنا ہوا

ممکن ہے مار دے مجھے اس کی کوئی خبر
دشمن ہے جس کا میرا گھرانہ بنا ہوا

بارش کی آگ ہے مرے اند ر لگی ہوئی
بادل ہے آنسوؤں کا بہانہ بنا ہوا

نیناں کئی برس سے ہوا کی ہوں ہم نفس
 ... ....ہے یہ بدن اُسی کا خزانہ بنا ہوا


Be-Rooh Larkiyo'n Ka Thikana Bana Hua
Kamra Hai Mera Aaiena Khana Bana Hua

Mein Ne Tou Koi Baat Kisi Se Nahi Kahi
Socha Hay Jo Wohi Hai Fasana Bana Hua

Nadya Mein Kis Ne Rakh Diye Jaltey Heuy Charag
Mosam Hai Chashm-e-Tar Ka Suhana Bana Hua

Aurat Ka Zehan Mard Ki Is Kainaat Mein
Ab Tak Hai Uljhano Ka Thikana Bana Hua

Mumkin Hai Maar Day Mujhe Uski Koi Khabar
Dushman Hai Jis Ka Mera Gharana Bana Hua

Barish Ki Aag Hai Merey Andar Lagi Hui
Badal Hai Aansuo'n Ka Bahana Bana Hua

Naina'n Kai Baras Se Hawa Ki Hoon Hum-Nafas
Hai Yeh Badan Ussi Ka Thikana Bana Hua .. ...

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.