Monday, 28 October 2013

Pin It

Widgets

Hawa K Shor Ko Rakhna Aseer Jungle Mein ... ...

Jungle Mein

    ہوا کے شور کو رکھنا اسیر جنگل میں
    میں سن رہی ہوں قلم کی صریر جنگل میں

    ہتھیلیوں پہ ہوا سنسناتی پھرتی ہے
    میں اس کی چاہَ کی ڈھونڈوں لکیر جنگل میں

    خیال رکھنا ہے پیڑوں کا خشک سالی میں
    نکالنی ہے مجھے جوئے شیر جنگل میں

    دیارِ جاں میں پھرے رات دندناتی ہوئے
    ادھر ہے قید سحر کا سفیر جنگل میں

    عجیب لوگ ہیں دل کے شکار پر نکلے
    کمان شہر میں رکھتے ہیں تیر جنگل میں

    طلب کےشہر میں تھا جو سدا قیام پذیر
    سنا ہے رہتا ہے اب وہ فقیر جنگل میں

    کبھی جو چھو کے گزرجائے نرم سا جھونکا
    یہ زلف لے کر اڑائے شریر جنگل میں

    بڑے سکون سے رہتے ہیں لوگ بستی کی
    رکھی ہےدشت میں غیرت ضمیر جنگل میں

    ہوا میں آج بھی روتی ہے بانسری نیناں
  .. ..  اداس پھرتی ہے صدیوں سے ہیر جنگل میں​ 


Hawa K Shor Ko Rakhna Aseer Jungle Mein
Mein Sun Rahi Hoon Qalam Ki Sareer Jungle Mein

Hatheliyo’n Pay Hawa Sansanaati Phirti Hai
Mein Uski Chah Ki Dhoondu'n Lakeer Jungle Mein

Kahayal Rakhna hai Pairro'n Ka Khushk Saali MEin
Nikaalni Hai Mujhe Joey Shair jungle Mein

Diyar-e-Jaa'n MEin Phiray Raat dandanati Huey
Udhar Hai Qaid Sehar Ka Safeer Jungle Mein

Ajeeb Log Hein Dil K Shikaar Par Nikley
Kamaan Shehar Mein Rakhtey Hein, Teer Jungle Mein

Talab K Shehar Mein Tha Jo Sada Qayaam Pazeer
Suna Hai Rehta Hai Ab Woh Faqeer Jungle Mein

Kabhi Jo Chhoo Kar Guzar Jaey Naram Sa Jhonka
Yeh Zulf Lay Kar Urraey Shareer Jungle Mein

Baday Sukoon Se Rehtey Hein Log Basti K
Rakhi Hai Dasht Mein Gairat Zameer Jungle Mein

Hawa Mein Aaj Bhi Roti Hai Baa'nsuri Naina'n
Udas Phirti Hai Sadyo'n Se HEER Jungle Mein ... ..

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It 
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.