Monday, 14 October 2013

Pin It

Widgets

Is Hijr K Mosam Ki Hawa Taiz Bohat Hai .. ..

Hijr K Mosam

اِک موجۂ صہبائے جُنوں تیز بہت ہے​
اِک سانس کا شیشہ ہے کہ لبریز بہت ہے​
کچھ دِل کا لہُو پی کے بھی فصلیں ہُوئیں شاداب​
کچھ یُوں بھی زمیں گاؤں کی زرخیز بہت ہے​
پلکوں پہ چراغوں کو سنبھالے ہوئے رکھنا​
اِس ہجر کے موسم کی ہوا تیز بہت ہے​
بولے تو سہی، جھوٹ ہی بولے وہ بلا سے​
ظالم کا لب و لہجہ دلآویز بہت ہے​
کیا اُس کے خدوخال کھلیں اپنی غزل میں​
وہ شہر کے لوگوں میں کم آمیز بہت ہے​
محسنؔ اُسے ملنا ہے تو دُکھنے دو یہ آنکھیں​
 ... ...کچھ اور بھی جاگو کہ وہ "شب خیز" بہت ہے​


Ek Moja-E-Sehba-E-Junoon Taiz Bohat Hai
Ek Saans Ka Sheesha Hai Keh Labraiz Bohat Hai

Kuch Dil Ka Lahoo Pee K Bhi Faslein Hoin Shadaab
Kuch Yun Bhi Zameen Gaaon Ki Zarkhaiz Bohat Hai

Palko’n Pe Charaghon Ko Sanbhalay Howay Rakhna
Is Hijr K Maosam Ki Hawa Taiz Bohay Hai

Bolay Tou Sahi, Jhoot He Bolay Woh Bala Say
Zalim Ka Lab-O-Lehja DilaAawaiz Bohat Hai

Kiya Us K Khid-O-Khal Khulein Apni Ghazal Mein
Woh Shehar K Logo’n Mein Kam-Aamaiz Bohat Hai

Mohsin Usay Milna Hai Tou Dukhnay Do Yeh Aankhein
Kuch Aur Bhi Jaago Keh Woh  ''Shab-Khaiz''  Bohat Hai .. ..


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.