Sunday, 27 October 2013

Pin It

Widgets

Na Koi Khuwab Na Saheli Thi .. ..

kahan k Sachay

نا کوئی خواب نا سہیلی تھی
اس محبت میں میں اکیلی تھی

عشق میں تم کہاں کے سچے تھے
جو اذیت تھی ہم نے جھیلی تھی

یاد اب کچھ نہیں رہا لیکن
ایک دریا تھا یا حویلی تھی

جس نے الجھا کے رکھ دیا دل کو
وہ محبت تھی یا پہیلی تھی

میں ذرا سی بھی کم وفا کرتی
تم نے تو میری جان لے لی تھی

وقت کے سانپ کھا گئے اسکو
میرے آنگن میں ایک چمیلی تھی

اس شب غم میں کس کو بتلائوں
 .. ..کتنی روشن میری ہتھیلی تھی


Na Koi Khuwab Na Saheli Thi
Is Mohabbat Mein, Mein Akeli Thi

Ishq Mein Tum Kahan K Sachay Thay
Jo Aziyat Thi Hum Ne Jhaili Thi

Yaad Ab Kuch Nahi Raha Lekin
Aik Darya Tha Ya Haweli Thi

Jis Ne Uljha K Rakh Diya Dil Ko
Woh Mohabbat Thi Ya Paheli Thi

Mein Zara Si Bhi Kam Wafa Karti
Tum Ne Tou Meri Jaan Lay Li Thi

Waqt K Saanp Kha Gaey Us Ko
Mere Aangan Mein Ik Chanbeli Thi

Is Shab-e-Gham Mein Kis Ko Batlaauo'n
Kitni Roshan Meri Hatheli Thi ... 

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.