Saturday, 23 November 2013

Pin It

Widgets

Chashm-e-Be-Khuwab Pay Khuwabo'n Ka Asar Lagta Hai ... ....

Kaisa pat-Jharr Hai

چشم بے خواب پہ خوابوں کا اثر لگتا ہے
کیسا پت جھڑ ہے کہ شاخوں پہ ثمر لگتا ہے

مہلت عمر بس اتنی تھی کہ گزرا ہوا وقت
اک ڈھلکتے ہوے آنسو کا سفر لگتا ہے

کہیں کچھ اور بھی ہو جاؤں نہ ریزہ ریزہ
ایسا ٹوٹا ہوں کہ جڑتے ہوے ڈر لگتا ہے

لوگ چکراے ہوے پھرتے ہیں گھر سے گھر تک
دور سے دیکھو تو یہ شہر بھنور لگتا ہے

وقت نظریں بھی پلٹ جاتا ہے اقدار کہ ساتھ
دن بدلتے ہیں تو ہر عیب ہنر لگتا ہے

اک ملامت کی علامت ہے میرے چہرے پر
سنگ دشمن ہے اور شام و سحر لگتا ہے

اب جو چاہیں بھی تو اس طرح نہیں مل سکتے
پیڑ اکھڑے تو کہاں بار دگر لگتا ہے

ذہن کی جھیل سے یادوں کی دھنک پھوٹتی ہے
ایک میلہ ہے جو ہر شام ادھر لگتا ہے

کوئی شوریدہ جان جسم کے اندر ہے سعود
... ..دل دھڑکتا ہے کہ دیوار سے سر لگتا ہے



Chashm-e-Be-Khuwab Pay Khuwabo’n Ka Asar Lagta Hai
Kaisa Pat-Jharr Hai Shaakho’n Pay Samar Lagta Hai

Mohlat-e-Umar Bus Itni Si Thi Keh Guzra Hua Waqt
Ik Dhalaktey Huey Aansoo Ka Safar Lagta Hai

Kaheen Kuch Aur Bhi Ho Jaon Na Raiza’h Raiza’h
Aisa Toota Hoon Keh Jurrtay Huey Dar Lagta Hai

Log Chakraey Huey Phirtey Hein Ghar Se Ghar Tak
Door Se Dekho Tou Yeh Shehar Bhanwar Lagta Hai

Waqt Nazrein Bhi Palat Jata Hai Iqdaar K Sath
Din Badaltey Hein Tou Har Aib Hunar Lagta Hai

Ik Malamat Ki Alamat Hai Meray Chehray Par
Sung Dushman Hai Aur Sham-o-Sehar Lagta Hai

Ab Jo Chahein Bhi Is Tarha Nahi Mil Saktey
Pair Ukhrey Tou Kahan Baar Dagar Lagta Hai

Zehan Ki Jheel Si Yadon Ki Dhanak Phoot’ti Hai
Aik Maila Hai Jo Har Shaam Idhar Lagta Hai

Koi Shorida-e-Jaa’n Jism K Andar Hai Saood
Dil Dharakta Hai Keh Diwaar Se Sar Lagta Hai…

Please Do Click +1 Button If You Liked The Post  Then Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.