Tuesday, 19 November 2013

Pin It

Widgets

Hum Jo KeHne Ko Khizaa'n Mein Bhi Haray Rehtay Hein ....

Hum Zara Apne

ہم جو کہنے کو خزاں میں بھی ہرے رہتے ہیں
موسمِ گل میں بھی اندر سے مرے رہتے ہیں

تم کو آنا ہو تو آ جاؤ مگر یاد رہے
ہم ذرا اپنے زمانے سے پرے رہتے ہیں

ہاں کبھی اپنے بھی ہمسائے ہوا کرتے تھے
اب تو ہم اپنے ہی سائے سے ڈرے رہتے ہیں

جیسے دیوار پہ رکھے ہوئے بے ُنور چراغ
ایسے کچھ سر بھی تو شانوں پہ دھرے رہتے ہیں

ہے مگر چاند کی خواہش بھی اُنھی کو زیبا
جن کے کشکول ستاروں سے بھرے رہتے ہیں

اُن کو ُسولی پہ کہ نیزے پہ سجا دو عاجزؔ
جو کھرے ہیں وہ بہ ہر حال کھرے رہتے ہیں


Hum Jo KeHne Ko Khizaa'n Mein Bhi Haray Rehtay Hein
Mosam-e-Gul Mein Bhi Andar Se Maray Rehtay Hein

Tum Ko Aana Ho Tou Ajao Magar Yaad Rahey
Hum Zara Apne Zamane Se Paray Rehtay Hein

Haan Kabhi Apne Bhi Hum-Saaey Hua Kartey Thay
Ab Tou Hum Apne He Saey Se Daray Rehtay Hein

Jiasay Diwaar pay Rakhay Huey Be-Noor Charaag
Aisay Kuch Sar Bhi Tou Shaano Pay Dharay Rehtay Hein

Hai Magar Chaand Ki Khuwahish Bhi Unhe Ko Zeba
Jin K Kashkol Sitaro'n Se Bharay Rehtay Hein

Unko Sooli Pay Keh Naizay Pay Saja Do Aajiz
Jo Kharay Hein Woh Bahar Haal Kharay Rehtay Hein..


Please Do Click +1 Button If You Liked The Post  Then Share It


Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.