Sunday, 24 November 2013

Pin It

Widgets

Jaan-e-Azeez Yeh Teray Janay K Din Na Thay ... ...

janey K Din

مٹی میں اپنا آپ، ملانے کے دن نہ تھے
جان عزیز، یہ تیرے، جانے کے دن نہ تھے



اب تو بہار آئی تھی، اب تو کھلے تھے پھول
یہ اہل گلستاں کو، رلانے کے دن نہ تھے

مانا کہ تجھ کو رسم مدارات تھی عزیز
لیکن ابھی قضا کو، بلانے کے دن نہ تھے

گہری ھے شام، چاند کا امکان بھی نہیں
یہ تو تیرے چراغ، بجھانے کے دن نہ تھے



باقی تھی رات اور ابھی، احباب بیٹھے تھے
یوں جا کے بزم غیر، سجانے کے دن نہ تھے



شہزادیوں کی طرح رکھا تھا جسے کبھی
....جنگل میں اسکو چھوڑ کے، جانے کے دن نہ تھے


Mitti Mein Apna Aap Milaney K Din Na Thay
Jaan-e-Azeez , Yeh Teray, Janey K Din Na Thay

Ab Tou Bahaar Aaiee Thi, Ab Tou Khilay Thay Phool
Yeh Ehl-e-Gulistaa'n Ko Rulaney K Din Na Thay

Mana K Tujh Ko Rasm-e-Madarat Thi Azeez
Lekin Abhi Qaza Ko, Bulaney K Din Na Thay

Gehri Hai Shaam , Chaand Ka Imkaan Bhi Nahi
Yeh Tou Teray Charaag, Bujhaney K Din Na Thay

Baqi Thi Raat Aur Abhi, Ehbaab Baithay Thay
Yun Ja K Bazm-e-Gair Sajanaey K Din Na Thay

Shehzadiyo'n Ki Tarha Rakha Tha Jisay Kabhi
Jungle Mein Usko Chorr K ,Janey K Din Na Thay.. ..

Please Do Click +1 Button If You Liked The Post  Then Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.