Thursday, 21 November 2013

Pin It

Widgets

Kaisay Ikhlaas K Zamaney Thay .. ...

Mereay Fasaney Thay

کیسے اخلاص کے زمانے تھے
تیر کی تاک میں نشانے تھے

بستی بستی جمال بکھرا تھا
قریہ قریہ مرے فسانے تھے

زندگی زندگی سی لگتی تھی
زندہ رہنے کے سو بہانے تھے

جام و مینا کی کس کو حاجت تھی
آنکھوں آنکھوں شراب خانے تھے

تنکا تنکا جو آج بکھرے ہیں
کل پرندوں کے آشیانے تھے

اس کو جلدی تھی لوٹ جانے کی
میرے پیشِ نظر زمانے تھے

شہر میں جشنِ سنگ باری تھا
اور مجھے آئنے بچانے تھے

آنسوؤں سے نہ دُھل سکے عاجزؔ
.. ..داغ گہرے تھے اور پرانے تھے
Kaisay Ikhlaas K Zamaney Thay
Teer Ki Taak Mein Nishaney Thay

Basti Basti Jamaal Bikhra Tha
Qarya Qarya Merey Fasaney Thay

Zindagi Zindagi Si Lagti Thi
Zinda Rehne K So Bahaney Thay

Jam-o-Meena Ki Kis Ko Hajat Thi
Aankho'n Aankho'n Sharab Khaney Thay

Tinka Tinka Jo Aaj Bikhrey Hein
Kal Parindo'n K Aashyaney Thay

Us Ko Jaldi Thi Lout Janey Ki
Merey Paish-e-Nazar Zamaney Thay

Shehar Mein Jshn-e-Sang-e-Bari Tha
Aur Mujhe Aaieney Bachaney Thay

Aansou'n Se Na Dhul Sakaey Aajiz
Daag Gehray Thay Aur Puraney Thay…

Please Do Click +1 Button If You Liked The Post  Then Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.