Wednesday, 4 December 2013

Pin It

Widgets

Badlay Huey Halaat Se Dar Jata Hoon Aksar

Sahil Ki Sada


بدلے ہوئے حالات سے ڈر جاتا ہوں اکثر
شیرازہ ملت ہوں ، بکھر جاتا ہوں اکثر

میں ایسا سفینہ ہوں کہ ساحل کی صدا پر
طوفان کے سینے میں اُتر جاتا ہوں اکثر

میں موت کو پاتا ہوں کبھی زیرِ کفِ پا
ہستی کے گماں سے بھی گزر جاتا ہوں اکثر

مرنے کی گھڑی آئے تو میں زیست کا طالب
جینے کا تقاضا ہو تو مر جاتا ہوں اکثر

رہتا ہوں اکیلا میں بھری دنیا میں واصف
.. ....لے نام مرا کوئی تو ڈر جاتا ہوں اکثر



Badlay Huey Halaat Se Dar Jata Hoon Aksar
Sheeraza-e-Millat Hoon , Bikhar Jata Hoon Aksar

Mein Aisa Safeena Hoon Keh Sahil Ki Sada Par
Toofan K Seenay Mein Utar Jata Hoon Aksar

Mein Mout Ko Pata Hoon Kabhi Zari-e-Kaf-e-Paa
Hasti K Gumaa’n Se Bhi Guzar Jata Hoon Aksar

Marney Ki Gharri Aaey Tou Mein Zeest Ka Talib
Jeenay Ka Taqza Ho Tou Mar Jata Hoon Aksar

Rehta Hoon Akela Mein Bhari Dunya Mein Wasif
Lay Mera Naam Koi Tou Dar Jata Hoon Aksar…. ….

 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post & Share It.

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.