Friday, 27 December 2013

Pin It

Widgets

Kaha Tha Yeh December Mein Hamein Tum Milney Aao Gay


کہا تھا یہ دسمبر میں
ہمیں تم ملنے آؤ گے
دسمبر کتنے گذرے ہیں
تمہاری راہوں تکتے
نجانے کس دسمبر میں
تمہیں ملنے کو آنا ہے
ہماری تو دسمبر نے
بہت امیدیں توڑی ہیں
بڑے سپنے بکھیرے ہیں
ہماری راہ تکتی منتظر
پرنم نگاہوں میں
ساون کے جو ڈیرے ہیں
دسمبر کے ہی تحفے ہیں
دسمبر پھر سے آیا ہے
جو تم اب بھی نہ آئے تو
پھر تم دیکھنا خود ہی
تمہاری یاد میں اب کے
اکیلے ہم نہ روئیں گے
ہمارا ساتھ دینے کو
ساون کے بھرے بادل
گلے مل مل کے روئیں گے
پھر اتنا پانی برسے گا
سمندر سہہ نہ پائے گا
کرو نہ ضد چلے آؤ
رکھا ہے کیا دسمبر میں
دلوں میں پیار ہو تو پھر
مہینے سارے اچھے ہیں
کسی بھی پیارے موسم میں
چپکے سے چلے آؤ
سجن اب مان بھی جاؤ
دسمبر تو دسمبر ہے
دسمبر کا بھروسہ کیا

...دسمبر بیت ہی جائے گا
Kaha Tha Yeh Decmber Mein
Hamein Tum Milney Aaogay
December Kitney Guzarey Hein
Tumhari Raaho’n Ko Taktey
Najaney Kis December Mein
Tumhe Milney Ko Aana Hai
Hamari Tou December Ne
Bohat Umeedien Torri Hein
Baday Sapne Bakhairay Hein
Hamari Raah Takti Muntazir
Purnam Nigahon Mein
Sawan K Jo Dairay Hein
December He K Tohfay Hein
December Phir Se Aaya Hai
Jo Tum Ab Bhi Na Aaey Tou
Phir Tum Dekhna Khud He
Tumhari Yaad Mein Ab K
Akelay Hum Na Roien Gay
Hamara Sath Dainay Ko
Sawan K Bharay Badal
Galay Mil Mil K Roien Gay
Phir Itna Pani Barsay Ga
Samandar She Na Paey Ga
Karo Na Zid Chalay Aao
Rakha Hai Kia Decmber Mein
Dilo’n Mein Piyar Ho Tou Phir
Maheenay Saray Achay Hein
Kisi Bhi Piyare Se Mosam Mein
Chupkey Se Chalay Aao
Sajan Ab Maan Bhi Jaao
December Tou December Hai
December Ka Bharosa Kia
December Beet He Jaey Ga ..



 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post & Share It.
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

5 comments:

Thanks For Nice Comments.