Wednesday, 18 December 2013

Pin It

Widgets

Khuwahishon K Zehar Mein Ikhlaas Ka Rus Ghol Kar

Pathar Ho Gaya

    خواہشوں کے زہر میں اخلاص کا رس گھول کر
    وہ تو پتھر ہو گیا دو چار دن ہنس بول کر

    دِل ہجومِ غم کی زد میں تھا سنبھلتا کب تلک؟
    اِک پرندہ آندھیوں میں رہ گیا پَر تول کر

    اپنے ہونٹوں پرسجا لے قیمتی ہیروں سے لفظ
    اپنی صورت کی طرح باتیں بھی تو انمول کر

    آج اُس کی حدِ بخشش ہے تیرے سر سے بلند
    آج اپنے سر سے بھی اُونچا ذرا کشکول کر

    بند ہاتھوں کا مقدر تھیں سبھی کرنیں مگر
    سارے جگنو اُڑ گئے دیکھا جو مٹھی کھول کر

    شہر والے جھوٹ پر رکھتے ہیں بنیادِ خلوص
   ... مجھ کو پچھتانا پڑا "محسن" یہاں سچ بول کر 

Khuwahishon K Zehar Mein Ikhlaas Ka Rus Ghol Kar
Woh Tou Pathar Ho Gaya Do Chaar Din Huns Bol Kar

Dil Hujoom-e-Gham Ki Zad Mein Tha Sanbhalta Kab Talak
Ik Parinda Aandhiyon Mein Reh Gaya Par Tol Kar

Apne Honto'n Pay Saja Le Qeemti Heeron Se Lafz
Apni Soorat Ki Tarha Baten Bhi Tou Anmol Kar

Aaj Uski Had-e-Bakhshish Hai Teray Sar Se Buland
Aaj Apne Sar Se Bhi Ooncha Zara Kashkol Kar

Band Hathon Ka Muqaddar Thi Sabhi Kirnein Magar
Saray Jugno Urr Gaey Dekha Jo Muthi Khol Kar

Shehar Walay Jhoot Par Rakhtey Hein Bunyad-e-Khuloos
Mujhko Pachtana Parra Mohsin Yahan Such Bol Kar........


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post & Share It.

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.