Sunday, 8 December 2013

Pin It

Widgets

Labo'n Pay Phool Khiltey Hein Kisi K Naam Se Pehlay

Tumhare Naam Se

لبوں پہ پُھول کِھلتے ہیں کسی کے نام سے پہلے
دِلوں کے دیپ جلتے ہیں چراغِ شام سے پہلے

کبھی منظر بدلنے پر بھی قِصّہ چل نہیں پاتا
کہانی ختم ہوتی ہے کبھی انجام سے پہلے

یہی تارے تمہاری آنکھ کی چلمن میں رہتے تھے
یہی سُورج نکلتا تھا تُمہارے بام سے، پہلے

دِلوں کی جگمگاتی بستیاں تاراج کرتے ہیں
یہی جو لوگ لگتے ہیں نہایت عام سے پہلے

ہوئی ہے شام جنگل میں پرندے لوٹتے ہونگے
اب اُن کو کِس طرح روکیں، نواحِ دام سے ، پہلے

یہ سارے رنگ مُردہ تھے تمہاری شکل بننے تک
یہ سارے حرف مہمل تھے تمہارے نام سے پہلے

ہُوا ہے وہ اگر مُنصف تو امجد احتیاطً ہم
... ... سزا تسلیم کرتے ہیں کسی الزام سے پہلے



Labo'n Pay Phool Khiltey Hein Tumhare Naam Se Pehlay
Dilo'n K Deep Jaltey Hein Charag-e-Shaam Se Pehlay

Kabhi Manzar Badalney Par Bhi Qissa Chal Nahi Pata
Kahani Khatam Hoti Hai Kabhi Anjaam Se Pehlay

Yehi Taray Tumhari Aankh Ki Chilman Mein Rehtay Thay
Yehi Sooraj Nikalta Tha Tumhare Baam Se Pehlay

Dilo'n Ki Jagmagati Bastiyan Taraaj Kartey Thay
Yehi Jo Log lagtey Hein Nehayat Aam Se Pehlay

Hui Hai Shaam Jungle Mein Parinday Lot'tay Hon Gay
Ab Unko Kis Tarha Rokein, Nawah-e-Daam Se Pehlay

Yeh Saray Rung Myrda'h Thay Tumhari Shakal Banney Tak
Yeh Saray Hurf Mehmil Thay Tumhare Naam Se Pehlay

Hua Hai Woh Agar Munsif Tou Amjad Ehtiyatan Hum
Saza Tasleem Kartey Hein Kisi Ilzaam Se Pehlay... .....


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post & Share It.

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.