Saturday, 14 December 2013

Pin It

Widgets

Mohabbat Ka Irada'h Kar Liya Jaey

   Zara Dil Ko
    
  محبت کا ارادہ کر لیا جائے
ذرا دل کو کشادہ کر لیا جائے

پڑا برسوں سے ہے بے کار دل اپنا
کہو تو استفادہ کر لیا جائے

اگر کم ہو، تو مے میں کیا مزہ ساقی
اسے کچھ اور زیادہ کر لیا جائے

نبھانا ہوگا ممکن تو نبھا لیں گے
ابھی رسماً ہی وعدہ کر لیا جائے

عمل پیہم بھی ہو کافی نہیں لیکن
یقیں کو استعادہ کر لیا  جائے

کہاں بھولے ہیں لذت وصل کی جاناں
مگر پھر بھی اعادہ کر لیا جائے

کرو ہمت تو مشکل کچھ نہیں اظہر
.... .... مصمم بس ارادہ کر لیا جائے



Mohabbat Ka Iradah Kar Liya Jaey
Zara Dil Ko Kushadah Kar Liya Jaey

Parra Barson Se Hai Baikaar Dil Apna
Kaho Tou Istafadah Kar Liya Jaey

Agar Kam Ho, Tou May Mein Kia Maza Saqi
Isay Kuch Aur Ziada Kar Liya Jaey

Nibhana Ho Ga Mumkin,Tou Nibha Lein Gay
Abhi Rasman He Wada Kar Liya Jaey

Amal Paihum Bhi Ho, Kafi Nahi Lekin
Yaqeen Ko Estadah Kar Liya Jaey

Kahan Bhooley Hein Lazzat Visal Ki Janaa
Magar Phir Bhi A'adaa Kar Liya Jaey

Karo Himmat Tou Mushkil Kuch Nahi Azhar
Musamum Bus Iradah Kar Liya Jaey ... .....


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post & Share It. 

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.