Saturday, 28 December 2013

Pin It

Widgets

Phir Bhi Laa Dey Tou Koi Dost Hamare Ki Misaal


ہونٹ ہیروں سے نہ چہرہ ہے ستارے کی مثال
پھِر بھی لادے تو کوئی دوست ہمارے کی مثال

مجھ سے کیا ڈوبنے والوں کا پتہ پوچھتے ہو
میں سمندر کا حوالہ , نہ کنارے کی مثال

زندگی اوڑھ کے بیٹھی تھی ردائے شبِ غم
تیرا غم ٹانک دیا ہم نے ستارے کی مثال

عاشقی کو بھی ہوس پیشہ تجارت جانیں
وصل ہے نفع تو ہجراں ہے خسارے کی مثال

ہم کبھی ٹوٹ کے روئے نہ کبھی کھُل کے ہنسے
رات شبنم کی طرح، صبح ستارے کی مثال

نا سپاسی کی بھی حد ہے جو یہ کہتے ہو فراز
 .... ...زندگی ہم نے گزاری ہے گزارے کی مثال


Hont Heeron Se Na Chehra Hai Sitarey Ki Misaal
Phir Bhi Laa Dey Tou Koi Dost Hamare Ki Misaal

Mujhse Kia Doobney Walon Ka Pata Poochtey Ho
Mein Samandar Ka Hawala , Na Kinarey Ki Misaal

Zindagi Orrh K Bethi Thi Rida-e-Shab-e-Gham
Tera Gham Taank Diya Hum Ne Sitarey Ki Misaal

Aashqi Ko Bhi Hawas Paisha Tijarat Janei'n
Visal Hai Naf'aa Tou Hijra'n Hai Khasarey Ki Misaal

Hum Kabhi Toot K Roey Na Kabhi Khul K Ha'nsey
Raat Shabnum Ki Tarha , Subha Sitarey Ki Misaal

Na Sapasi Ki Bhi Hadh Hai Jo Yeh Kehtay Ho Faraz
Zindagi Hum Ne Guzari Hai Guzarey Ki Misaal.. ....


 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post & Share It.

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

2 comments:

Thanks For Nice Comments.