Monday, 16 December 2013

Pin It

Widgets

Sada Bahaar Shajar Bhi Jala Diye Us Ne

Nahi K Sirf

نہیں کہ صرف پرندے اڑا دیے اُس نے
سدا بہار شجر بھی جلا دیے اُس نے

جو کوہِ زرد سے اترا بڑا سخی بن کر
ہمارے ہاتھ میں کاسے تھما دیے اُس نے

یہ حکم ہے کہ انہیں خلعتیں کہا جائے
جو چیتھڑے سے بنامِ خدا دیے اُس نے

نہیں ہے قید کوئی ریگِ تیرگی پہ مگر
فراتِ نور پہ پہرے بٹھا دیے اُس نے

ابھی تو دشت کی دہشت سے ہی نجات نہ تھی
خلا کے ڈر بھی گھروں میں بسا دیے اُس نے

سروں پہ آئی بلائیں تو ٹل ہی جائیں گی
مگرجو روگ,  دلوں کو لگا دیے اُس نے

جو آندھیوں میں بھی پندارِخاک تھے یوسف
..... وہ سارے خواب تماشا بنا دیے اُس نے



Nahi K Sirf Parinday Urra Diye Us Ne
Sada Bahaar Shajar Bhi Jala Diye Us Ne

Jo Koh-e-Zard Se Utra Barra Sakhi Ban Kar
Hamarey Hath Mein Kasay Thama Diye Us Ne

Yeh Hukum Hai Keh Uneh Khal'atein Kaha Jaey
Jo Cheethrray Se Banam-e-Khuda Diye Us Ne

Nahi Hai Qaid Koi Raig-e-Teergi Pay Magar
Firat-e-Noor Pay Pehray Bitha Diye Us Ne

Abhi Tou Dasht Ki Dehshat Se He Nijat Na Thi
Khala K Dar Bhi Gharo'n Mein Basa Diye Us Ne

Saro'n Pay Aaiee Balaein Tou Tul He Jaengi
Magar Jo Rog, Dilo'n Ko Laga Diye Us Ne

Jo Aandhiyon Mein Pindar-e-Khaak Thay Yousuf
Woh Saray Khuwab Tamasha Bana Diye Us Ne .... ...


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post & Share It.

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.