Sunday, 19 January 2014

Pin It

Widgets

Jab Tak Gham-e-Jahaan K Hawaley Huey Nahi

 
Hum Zindagi K
       
    جب تک غمِ جہاں کے حوالے ہوئے نہیں
    ہم زندگی کے جاننے والے ہوئے نہیں

    کہتا ہے آفتاب ذرا دیکھنا کہ ہم
    ڈوبے تھے گہری رات میں، کالے ہوئے نہیں

    چلتے ہو سینہ تان کے دھرتی پہ کس لیے
    تم آسماں تو سر پہ سنبھالے ہوئے نہیں

    انمول وہ گہر ہیں جہاں کی نگاہ میں
    دریا کی جو تہوں سے نکالے ہوئے نہیں

    طے کی ہے ہم نے صورتِ مہتاب راہِ شب
    طولِ سفر سے پاؤں میں چھالے ہوئے نہیں

    ڈس لیں تو ان کے زہر کا آسان ہے اُتار
    یہ سانپ آستین کے پالے ہوئے نہیں

    تیشے کا کام ریشۂ گُل سے لیا شکیبؔ
    ہم سے پہاڑ کاٹنے والے ہوئے نہیں

Jab Tak Gham-e-Jahaan K Hawaley Huey Nahi
Hum Zindagi K Janney Walay Huey Nahi

Kehta Hai Aftaab Zara Daikhna Keh Hum
Doobay Thay Gehri Raat Mein, Kalay Huey Nahi

Chaltey Ho Seena Taan K Dharti Pe Kis Liye
Tum Aasman Tou Sar Pe Sanbhaley Huey Nahi

Anmol Woh Gohar Hein Jahan Ki Nigaah Mein
Darya Ki Jo Tehon Se Nikaley Huey Nahi

Tay Ki Hai Hum Ne Soorat-e-Mehtab Rah-e-Shab
Tool-e-Safar Se Paaon Mein Chhaley Huey Nahi

Dus Lein tou In K Zehar ka Aasan Hai Utaar
Yeh Saanp Aasteen K paley Huey Nahi

Teeshay Ka Kaam Raisha-e-Gul Se Liya Shakeeb
Hum Se Pahaarr Kaatney Walay Huey Nahi...



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It 

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.