Monday, 13 January 2014

Pin It

Widgets

Kuch Agaey Hein Baalo'n Mein Chandi K Taar Bhi

Balon Mein Chandi

آتا ہے ہر چڑھائی کے بعد اک اُتار بھی
پستی سے ہم کنار ملے کوہسار بھی؟

دل کیوں دھڑکنے لگتا ہے اُبھرے جو کوئی چاپ
اب تو نہیں کسی کا مجھے انتظار بھی!

جب بھی سکوتِ شام میں آیا ترا خیال
کچھ دیر کو ٹھہر سا گیا آبشار بھی

کچھ ہو گیا ہے دھوپ سے خاکستری بدن
کچھ جم گیا ہے راہ کا مجھ پر غبار بھی

اس فاصلوں کے دشت میں رہبر وہی بنے
جس کی نگاہ دیکھ لے صدیوں کے پار بھی

اے دوست، پہلے قرب کا نشّہ عجیب تھا
میں سُن سکا نہ اپنے بدن کی پُکار بھی

رستہ بھی واپسی کا کہیں بن میں کھو گیا
اوجھل ہوئی نگاہ سے ہرنوں کی ڈار بھی

کچھ عقل بھی ہے باعثٕ توقیر اے شکیبؔ
...کچھ آ گئے ہیں بالوں میں چاندی کے تار بھی

Aata Hai Har Charrhaie K Baad Ik Utaar Bhi
Pasti Se Hum-Kinaar Milaey Kohsaar  Bhi

Dil Kiun Dharrakne Lagta Hai Ubhrey Jo Koi Chaap
Ab Tou Nahi Kisi Ka Mujhe Inatzaar Bhi

Jab Bhi Sakoot-e-Sham Mein Aaya Tera Khayal
Kuch Dair Ko Thehar  Sa Gaya Aabshaar Bhi

Kuch Ho Gaya Hai Dhoop Se Khakastari Badan
Kuch Jum Gaya Hai Mujh Par Raah Ka Gubaar Bhi

Iss Faslo’n K Dasht Mein Rehbar Wohi Baney
Jis Ki Nigah Daikh Lay Sadyon K Paar Bhi

Ay Dost,  Pehley Qurb Ka Nasha Ajeeb Tha
Mein Sun Saka Na Apne Badan Ki Pukaar Bhi

Rasta Bhi Wapsi Ka Kahin Bun Mein Kho Gaya
Ojhal Hui Nigah Say Hirno’n Ki Daar Bhi

Kuch Aqal Bhi Hai  Baa-e-Say  Toqeer Ay Shakeeb
Kuch Agaey Hein Baalo’n Mein Chandi Ka Taar Bhi ….



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.