Sunday, 26 January 2014

Pin It

Widgets

Mein Bhi Urroon Ga Aber K Shaano Pe Aaj Se

Tang Agaya Hoon

مَیں بھی اُڑوں گا ابر کے شانوں پہ آج سے
تنگ آ گیا ہُوں تشنہ زمیں کے مِزاج سے

مَیں نے سیاہ لفظ لِکھے دِل کی لَوح پر
چمکے گا درد اور بھی اِس اِمتزاج سے

انساں کی عافیت کے مسائل نہ چھیڑیئے
دُنیا اُلجھ رہی ہے ابھی تخت و تاج سے

گنگا تو بہہ رہی ہے مگر ہاتھ خُشک ہیں
بہتر ہے خُودکشی کا چلن اِس رِواج سے

تم بھی میرے مزاج کی لَے میں نہ ڈَھل سکے
..... .اُکتا گیا ہُوں میں بھی تمہارے سماج سے


Mein Bhi Urroon Ga Aber K Shaano Pe Aaj Se
Tang Aagaya Hoon Tishna Zameen K Mijaaz Se

Mein Ne Siyah Lafz Likhey Dil Ki Loh Par
Chamkey Ga Dard Aur Bhi Is Imtijaaz Se

Insaa’n Ki Aafiyat K  Masail Na Chairrye
Dunya Ulajh Rahi Hai Abhi Takht-O-Taaj Se

Ganga Tou Beh Rahi Hai Magar Hath Khushk Hein
Behtar Hai Khudkushi Ka Chalan Is Riwaaj Se

Tum Bhi Mere Mijaaz Ki Lay Mein Na Dhal Sakey
Ukta Gaya Hoon Mein Bhi Tumharey Samaaj Se …….


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.