Saturday, 18 January 2014

Pin It

Widgets

Mein US Gali Mein Akela Tha Aur Saaey Bohat

Roshniyon Ne Bhi

وہاں کی روشنیوں نے بھی ظلم ڈھائے بہت
میں اس گلی میں اکیلا تھا اور سائےبہت

کسی کے سر پہ کبھی ٹوٹ کرا گرا ہی نہیں
اس آسماں نے ہوا میں قدم جمائےبہت

نہ جانے رت کا تصرف تھا یا نظر کا فریب
کلی وہی تھی مگر رنگ جھلملائے بہت

ہواکا رخ ہی اچانک بدل گیا ورنہ
مہک کے قافلے صحرا کی سمت آئے بہت

یہ کائنات ہے میری ہی خاک کا ذرہ
میں اپنے دشت سے گزارا تو بھید پائے بہت

جو موتیوں کی طلب نے کبھی اداس کیا
تو ہم بھی راہ سے کنکر سمیٹ لائے بہت

بس ایک رات ٹھہرنا ہے کیا گلہ کیجے
مسافروں کو غنیمت ہے یہ سرائے بہت

جمی رہے گی نگاہوں پہ تیرگی دن بھر
کہ رات خواب میں تارے اُتر کے آئے بہت

شکیبؔ کیسی اُڑان، اب وہ پر ہی ٹوٹ گئے
....کہ زیرِ دام جب آئے تھے، پھڑپھڑائے بہت


Wahan Ki Roshniyon Ne Bhi Zulm Dhaaey Bohat
Mein Us Gali Mein Akela Tha Aur Saaey Bohat

Kisi K Sar Pe Kabhi Toot Kar Gira He Nahi
Us Aasman Ne Hawa Mein Qadam Jamaaey Bohat

Na Janey Rut Ka Tasarruf Tha Ya Nazar Ka Faraib
Kali Wahi Thi Magar Rung Jhilmilaey Bohat

Hawa Ka Rukh He Achanak Badal Gaya Warna
Mehak K Qafley Sehra Ki Simt Aaey Bohat

Yeh Kainat Hai Meri He Khhak Ka Zaara'h
Mein Apne Dasht Se Guzra Tou Bhaid Paaey Bohat

Jo Motiyon Ki Talab Ne Bohat Udas Kia
Tou Hum Bhi Raah Se Kankar Smait Laaey Bohat

Bus Aik Raat Theharna Hai Kia Gila  Kijiye
Musafiron Ko Ganimat Hai Yeh Saraey Bohat

Jami Rahey Gi Nigahon Pay Tairgi Din Bhar
Keh Raat Khuwab Mein Taray Utar K Aaaey Bohat

Shakeeb Kesi Urraan , Ab Woh Par He Toot Gaey
Keh Zair-e-Daam Jab Aaey Thay, Pharr-Pharraey Bohat....
  


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It 

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.