Friday, 7 February 2014

Pin It

Widgets

Chaman Mein Phool Khilein Gay Kisi Bahaney Se

Khizaan K Janey

    خزاں کے جانے سے ہو یا بَہار آنے سے
    چمن میں پھول کھلیں گے کسی بہانے سے

    وہ دیکھتا رہے مُڑ مُڑ کے سوئے در کب تک
    جو کروٹیں بھی بدلتا نہیں ٹھکانے سے

    اُگل نہ سنگِ ملامت خدا سے ڈر ناصح
    ملے گا کیا تجھے شیشوں کے ٹوٹ جانے سے

    زمانہ آپ کا ہے اور آپ اس کے ہیں
   لڑائی مول لیں ہم مفت کیوں زمانے سے

    خدا کا شکر سویرے سے ہی آگیا قاصد
    میں بچ گیا شبِ فرقت کے ناز اٹھانے سے

    میں کچھ کہوں نہ کہوں کہہ رہی ہے خاکِ جبیں
    کہ اس جبیں کو ہے نسبت اِک آستانے سے

    قیامت آئے قیامت سے میں نہیں ڈرتا
    اُٹھا تو دے کوئی پردہ کسی بہانے سے

    خبر بھی ہے تجھے آئینہ دیکھنے والے
    کہاں گیا ہے دو پٹّہ سرک کے شانے سے

    یہ زندگی بھی کوئی زندگی ہوئی بسملؔ
    ..نہ رو سکے نہ کبھی ہنس سکے ٹھکانے سے
   

Khizaan K Janey Se Ho Ya Bahaar Aaney Se
Chaman Mein Phool Khilein Gay Kisi Bahaney Se

Woh Dekhta Rahey Murr Murr K Sooey Dar Kab Tak
Jo Karwatein Bhi Badalta Nahi Thikaney Se

Ugal Na Sang-E-Malamat Khuda Se Dar Naseh
Milay Ga Kia Tujhe Sheeshon K Toot Janey Se

Zamana Aap Ka Hai Aur Aap Iss K Hein
Larraiee Mol Lein Hum Muft Kiun Zamaney Se

Khuda Ka Shukar  Sawairey Se He Aagaya Qasid
Mein Bach Gaya Shab-E-Furqat K Naaz Uthaney Se

Mein Kuch Kahon Na Kahon Keh Rahi Hai Khaak-E-Jabee'n
Keh Is Jabee'n Ko Hai Nisbat Ik Aastaney Se

Qayamat Aaey  Qayamat Se Mein Nahi Darta
Utha Tou Dey Koi Parda Kisi Bahaney Se

Khabar Bhi Hai Tujhe Aaiena Daikhney Walay
Kahan Gaya Hai Dupatta Sarak K Shaaney Se

Yeh Zindagi Bhi Koi Zindagi Hui Bismil
Na Ro Sakey Na Kabhi Hans Sakey Thikaney Se....


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It 
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.