Friday, 28 February 2014

Pin It

Widgets

Hamarey Hissay Mein Uzar Aaey Jawaaz Aaey Usool Aaey

Azaab Rut Thi

درختِ جاں پر عذاب رُت تھی
 نہ برگ جاگے نہ پھول آئے 
بہار وادی سے جتنے پنچھی
،ادھر کو آئے ملول آئے

نشاطِ منزل نہیں تو ان کو
 کوئی سا اجرِ سفر ہی دے دو
وہ رہ نوردِ رہِ جنوں جو
، پہن کے راہوں کی دھول آئے

وہ ساری خوشیاں جو اس نے چاہیں
 اُٹھا کے جھولی میں اپنی رکھ لیں
                    ہمارے حصّے میں عذر آئے
، جواز آئے ، اصول آئے

اب ایسے قصّے سے فائدہ کیا
 کہ کون کتنا وفا نِگر تھا
جب اُس کی محفل سے آگئے 
،اور ساری باتیں ہیں بھول آئے

وفا کی نگری لُٹی تو اس کے
 اثاثوں کا بھی حساب ٹھہرا
کسی کے حصّے میں زخم آئے
، کسی کے حصّے میں پھول آئے

بنامِ فصلِ بہار 
آزر
  وہ زرد پتے ہی معتبر تھے
جو ہنس کے رزقِ خزاں ہوئے ہیں
،..... جو سبز شاخوں پہ جھول آئے

Darakht-E-Jaan Pe Azaab Rut Thi
Na Burg Jaagay Na Phool Aaey
Bahaar Waadi Se Jitney Panchi
Idhar Ko Aaey Malool Aaey ,

Nishat-E-Manzil Nahi Tou UnKo
Koi Sa  Ajr-E-Safar He Dey  Do
Woh Reh Norid-E-Reh Junoo Jo
Pehan K Raahon Ki Dhool Aaey ,

Woh Sari Khushyan Jo Us Ne Chahi
Utha K Jholi Mein Apni Rakh Leei’n
Hamarey Hissay Mein Uzar Aaey
Jawaaz Aaey , Usool Aaey ,

Ab Aisay Qissay Se Faida'h Kia
Ke'h Kon Kitna Wafa Nagar Tha
Jab Us Ki Mehfil Se Aagaey
Aur Saari Batein Hein Bhool Aaey ,

Wafa Ki Nagri Luti Tou Us K
Asaaso'n Ka Bhi Hisaab Thehra
Kisi K Hissey Mein Zakhm Aaey
Kisi K Hissey Mein Phool Aaey ,

Ba-Naam-E-Fasl-E-Bahaar Aazir
Woh Zard Pattay He Moatabar Thay
Jo Huns K Rizq-E-Khizaan Huey Hein
Jo Sabz Shakho'n Pe Jhool Aaey........ ,

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.