Tuesday, 11 February 2014

Pin It

Widgets

Hichkiyon Ne Kisi Diwaar Mein Dar Rakha Tha


Sar Rakha Tha

ہچکیوں نے کسی دیوار میں در رکھا تھا
میرے آباء نے جب اِس خاک پہ سر رکھا تھا

گھر سے نکلے تھے تو اِک دشتِ فنا کی صورت
راہ میں صرف سفر،صرف سفر رکھا تھا

دل تھے متروکہ مکانات کی صورت خالی
اور اسباب میں بچھڑا ہوا گھر رکھا تھا

جسم اجداد کی قبروں سے نکلتے ہی نہ تھے
نسل در نسل اِسی خاک میں سر رکھا تھا

روح پر نقش تھے وہ نقش ابھی تک جن میں
رنگ بچپن کی کسی یاد نے بھر رکھا تھا

دل میں سر سبز تھے اُس پیڑ کے پتّے جس پر
دستِ قدرت نے ابھی پہلا ثمر رکھا تھا

کٹتے دیکھے تھے وہ برگد بھی ،جنہوں نے خود کو
مدتوں دھوپ کی بستی میں شجر رکھا تھا

جلتے دیکھے تھے وہ خود سوز محلّے جن میں
جانے کب سے کوئی خوابیدہ شرر رکھا تھا

چوڑیاں ٹوٹ کے بکھری تھیں ہر اک آنگن میں
اک کنواں تھا کہ تمنّاؤں سے بھر رکھا تھا

راہ تھی سُرخ گلابوں  کے  لہو سے روشن
پاؤں  رکھا  نہیں  جاتا تھا ، مگر رکھا  تھا

قافلے ایک ہی سرحد کی طرف جاتے تھے
خواب کے پار کوئی خواب دگر رکھا تھا

تیرگی چیر کے آتے ہوئے رستوں کے لئے
ایک  مہتاب  سرِ راہ  گزر  رکھا  تھا

اک حسیں چاند تھا اک سبز زمیں پر روشن
اک ستارے کو بھی آغوش میں بھر رکھا تھا

حرفِ اظہار میں حائل تھیں فصیلیں لیکن
رکھنے والے نے خموشی میں اثر رکھا تھا

لب تک آتے ہی نہ تھے حرف مناجاتوں کے
ہچکیوں نے کسی دیوار میں در رکھا تھا

چشمِ بینا میں وہ منظر ابھی تازہ ہے سعود
....میرے آباء نے جب اس خاک پہ سر رکھا تھا


Hichkiyon Ne Kisi Diwaar Mein Dar Rakha Tha
Meray Aaba’a Ne Jab Is Khaak Pe Sar Rakha Tha

Ghar Se Nikley Thay Tou Ik Dasht-E-Fana Ki Soorat
Raah Mein Sirf Safar, Sirf Safar Rakha Tha

Dil Thay Matrooka’h Makanaat Ki Soorat Khaali
Aur Asbaab Mein Bichhrra Hua Ghar Rakha Tha

Jism Ajdaad Ki Qabron Se Nikaltey He Na Thay
Nasal Dar Nasal Is Khaak Mein Sar Rakha Tha

Rooh Par Naqsh Thay Woh Naqsh Abhi Tak Jin Mein
Rung Bachpan Ki Kisi Yaad Ne Bhar Rakha Tha

Dil Mein Sar Sabz Thay Us Pairr K Pattay Jis Par
Dast-E-Qudrat Ne Abhi Pehla Samar Rakha Tha

Kat’tey Daikhey Thay Woh Bargad Bhi, Jinho’n Ne Khud Ko
Muddato’n Dhoop Ki Basti Mein Shajar Rakha Tha

Jaltey Daikhey Thay Woh Khud Soz Mohalley Jin Mein
Janey Kab Se Koi Khuwabeeda’h Sharar Rakha Tha

Chorriyaan Toot K Bikhri Thi Har Ik Aangan Mein
Ik  Ku’nwaan  Tha Jo Tamannao’n Se Bhar Rakha Tha

Raah  Thi  Surkh  Gulabo’n  K  Lahoo Se  Roshan
Paaon  Rakha  Nahi  Jata  Tha  Magar  Rakha Tha

Qaafley  Aik  He Sarhad  Ki  Taraf  Jatey  Thay
Khuwab K Paar Koi Khuwab-E-Dagar Rakha Tha

Teergi  Cheer  K  Aaey  Huey  Rasto’n K  Liye
Aik  Mehtaab  Sar-E-Raah  Guzar  Rakha  Tha

Ik Haseen Chaand Tha Ik Sabz Zameen Par Roshan
Ik Sitarey Ko Bhi Aagosh Mein Bhar Rakha Tha

Harf-E-Izhaar Mein Hayal Thi Faseelein Lekin
Rakhne Waley Ne Khamoshi Mein Asar Rakha Tha

Lab Tak Aatey He Na Thay Harf Manajato’n K
Hichkiyo’n Ne Kisi Diwaar Mein Dar Rakha Tha

Chashm-E-Beena Mein Woh Manzar Abhi Taza Hai Saood
Meray Aaba’a Ne Jab Is Khaak Pe Sar Rakha Tha……….

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.